ماہی۔۔ آل از ناٹ ویل

Jun 20, 2015 01:53 PM IST | Updated on: Aug 06, 2015 03:44 PM IST

تین میچوں کی یک روزہ سیریز کے پہلے مقابلہ میں بنگلہ دیش کے خلاف ملی شرمناک شکست کے بعد ٹیم انڈیا کی کارکردگی کا پوسٹ مارٹم تو ہو گا ہی۔

بنگلہ دیش نے ہندستان کو انہتر رن سے ہرا کر عالمی کپ کوارٹر فائنل کی ہار کا بدلہ جمعرات کو لے لیا۔ مقابلہ میں آٹھویں نمبر کی بنگلہ دیشی ٹیم نے دوسرے نمبر کی ٹیم انڈیا کو کھیل کے ہر ڈپارٹمنٹ میں پٹخنی دی۔ ٹیم انڈیا اپنی سب سے فیورٹ پلیئنگ الیون کے ساتھ بنگلہ دیش کے خلاف پہلے میچ میں میدان میں اتری۔ لیکن جس بات کا ڈر تھا وہی ہوا۔ ٹیم انڈیا کی حد سے زیادہ خود اعتمادی انہیں لے ڈوبی۔ یا یوں کہیں کہ پوری ٹیم جیتنے کے لئے اتری ہی نہیں تھی۔ کیا تھی اس کی وجہ؟ ٹیم انڈیا میں جلد ہی ردوبدل کا امکان ہے کیا؟

ذرائع کی مانیں تو ایک لابی کوہلی کے لئے کوشش کر رہی ہے۔ دلی اور ممبئی کی لابی دھونی کے خلاف متحد ہو چکی ہے۔ ٹیم کے ڈائریکٹر روی شاستری بھی اپنے بیانات سے جتا چکے ہیں کہ وہ کوہلی کو کپتان بنائے جانے کے حق میں ہیں۔ اگر ایسا ہے تو دھونی کے پسندیدہ کھلاڑیوں کا پتا کٹ بھی سکتا ہے۔

بات کرتے ہیں میچ کی۔ جس حساب سے بنگلہ دیش نے شروعات میں کھیلا وہ واقعی قابل تعریف تھا۔ انہوں نے ہندستان کے خلاف اپنا سب سے زیادہ ون ڈے اسکور بنایا۔ جس پچ پر ہندستانی تیز گیند بازوں کی پٹائی ہوئی، وہاں انہوں نے زبردست گیندبازی کا نمونہ پیش کیا۔ اپنا ڈبیو میچ کھیل رہے مستفیض الرحمن نے پانچ وکٹ جھٹکے، جس کے لئے انہیں مین آف دی میچ کا انعام بھی ملا۔

یہ ہوم گراونڈ پر بنگلہ دیش کی مسلسل نویں جیت ہے۔ اس جیت کے ساتھ بنگلہ دیش تین میچوں کی سیریز میں ایک صفر سے آگے ہو گیا ہے۔لیکن اب سوال یہ اٹھتا ہے کہ کیا ٹیم انڈیاسچ میں گراونڈ پر سنجیدہ ہو کر کھیلی یا کھلاڑیوں میں اس بات کا غصہ تھا کہ ان کی چھٹیاں کینسل کر کے انہیں زبردستی اس دورہ پر بھیجا گیا۔

حد سے زیادہ خود اعتمادی

یا پھر انہوں نے بنگلہ دیش کو بہت ہی ہلکے میں لے لیا یا پھر کوئی اور وجہ۔ مثال کے طور پر ٹیم میں اتحاد کی کمی نظر آئی۔ جس حساب سے کپتان دھونی ایک اوور کے لئے باہر چلے گئے، اس کا سبب ابھی تک پتہ نہیں چلا اور خود کوہلی کو وکٹ کے پیچھے آنا پڑا۔

اس کے علاوہ، پہلی بار کیپٹین کول اپنا آپا کھوتے ہوئے بھی نظر آئے۔ جس طرح سے انہوں نے بنگلہ دیش کے مستفیض الرحمن کو رن لیتے وقت کہنی ماری اس سے تو یہی لگتا ہے کہ آل از ناٹ ویل۔

کیا ٹیم انڈیا اب دو حصوں میں بٹ چکی ہے؟ کیا کوہلی بنام دھونی چل رہا ہے؟ جس حساب سے دھونی نے آسٹریلیا دورہ پر بیچ سیریز میں سنیاس لے لی اس سے تو یہی لگتا ہے۔ کیا گراونڈ کے اندر کچھ اور ڈریسنگ روم میں کچھ اور ہے ٹیم انڈیا۔ یہ تو وقت آنے پر پتہ چلے گا۔

لیکن روی شاستری اور کپتان دھونی کو جلد ہی اس کا حل نکالنا ہو گا۔ نہیں تو جو حشر پاکستان کا ہوا تھا وہ ٹیم انڈیا کا ہونے والا ہے۔

ری کمنڈیڈ اسٹوریز