موصل کی ایک منہدم عمارت سے 61 لاشیں برآمد

بغداد۔ عراقی فون نے کہا کہ مغربی موصل میں ایک منہدم عمارت سے جسے غالباً داعش نے دھماکہ کرکے تباہ کردیا، 61لاشیں برآمد ہوئی ہیں۔

Mar 27, 2017 11:16 AM IST | Updated on: Mar 27, 2017 11:24 AM IST

بغداد۔  عراقی فون نے  کہا کہ مغربی موصل میں ایک منہدم عمارت سے جسے غالباً داعش نے دھماکہ کرکے تباہ کردیا، 61لاشیں برآمد ہوئی ہیں اور اس بات کی کوئی علامت نہیں ہے کہ اسے اتحادی حملے میں نشانہ بنایا گیا ہو۔ حالانکہ قریب ہی دھماکہ خیز مادہ سے بھری ایک بڑی گاڑی برآمد ہوئی ہے۔ ایک فوجی بیان میں مقامی حکام اور عینی شاہدین کی فراہم کردہ ان اطلاعات سے اختلاف کیاگیا ہے کہ پچھلے ہفتے الجدیدہ علاقے میں داعش کے ٹھکاکنوں کے خلاف اتحادی حملے میں جس عمارت کو نشانہ بنایا گیا تھا اس سے تقریباً 200 لاشیں برآمد کی گئی ہیں۔

پچھلے ہفتہ 17 مارچ کو جو کچھ بھی ہوا وہ ابھی واضح نہیں ہے اور تفصیلات کی توثیق کرنا مشکل ہے کیونکہ عراقی افواج موصل کے نصف مغربی علاقے کی گھنی آبادی والے حصوں پر دوبارہ قبضہ کرنے کے لئے داعش کے ساتھ برسرپیکار ہیں جسے اسلامک اسٹیٹ کا گڑھ تصور کیا جاتا ہے۔ تاہم ، اس واقعہ سے مغربی موصل میں لڑائی کی پیچیدہ صورتحال کا اندازہ ہوتا ہے جہاں داعش کے جنگجو مقامی خاندانوں کے درمیان چھپے ہوئے ہیں اور انہیں ڈھال کے طور پر استعمال کر رہے ہیں جس کی وجہ سے تقریباً پانچ لاکھ افراد ابھی بھی داعش کے زیر قبضہ علاقوں میں سنگین خطرے سے دوچار ہیں۔

موصل کی ایک منہدم عمارت سے 61 لاشیں برآمد

تصویر: العربیہ ڈاٹ نیٹ

اس دوران امریکہ کی زیر قیادت اتحاد نے جو عراقی فوجوں کی مدد کر رہا ہے سنیچر کے روز بتایا کہ اس نے مبینہ ہلاکتوں کے علاقے میں داعش اور اس کے گولہ بارود اور ساز و سامان کو نشانہ بنایا تھا۔ تاہم اس نے ان ٹھکانوں کی تفصیلات یا ہلاکتوں کی تعداد کے بارے میں کچھ نہیں بتایا۔ عراقی فوج کمانڈ کے مطابق عینی شاہدین نے فوج کو بتایا کہ مذکورہ عمارت میں دھماکہ خیز مادہ چھپا دیئے گئے تھے اور جنگجوؤں نے اس کے مکینوں کو انسانی ڈھال کے طور پر استعمال کرنے کے لئے مجبور کیاتھا۔

Loading...

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز