ریفرینڈم : 92 فیصد عراقی کردوں کا آزادی کے حق میں ووٹ ، حیدر العبادی کی ریفرینڈم منسوخ کرنے کی اپیل

Sep 27, 2017 11:09 PM IST | Updated on: Sep 27, 2017 11:09 PM IST

اربیل : عراق کے خود مختار علاقے کردستان میں سوموار کو منعقدہ متنازع ریفرینڈم کے پہلے سرکاری نتائج کا اعلان کردیا گیا ہے جس کے مطابق 92 فی صد عراقی کردوں نے آزادی کے حق میں ووٹ دیا ہے۔العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق کردستان کے الیکشن کمیشن کے حکام نے بدھ کے روز علاقائی دارالحکومت اربیل میں ایک نیوز کانفرنس میں بتایا ہے کہ ریفرینڈم میں کل 3305925 ووٹروں نے اپنا حق رائے دہی استعمال کیا تھا۔ ان میں سے 92.73 فی صد نے کردستان کی آزادی کے لیے ’’ ہاں‘‘ میں ووٹ دیا ہے۔انھوں نے مزید بتایا ہے کہ ریفرینڈم میں ووٹ ڈالنے کی شرح 72.61 فی صد رہی ہے۔

ادھر عراق کے وزیراعظم حیدر العبادی نے کرد حکام سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ خودمختار کردستان میں منعقدہ آزادی ریفرینڈم کے نتیجے کو منسوخ کردیں تاکہ بحران کو مذاکرات کے ذریعے طے کیا جاسکے۔ انھوں نے بدھ کے روز عراقی پارلیمان میں تقریر کرتے ہوئے کردستان کی علاقائی حکومت کے صدر مسعود بارزانی سے اس مطالبے کا اعادہ کیا ہے کہ’’ وہ آیندہ جمعہ تک بین الاقوامی ہوائی اڈوں کا کنٹرول بغداد حکومت کے حوالے کردیں، دوسری صورت میں کردستان کے لیے براہ راست بین الاقوامی پروازوں پر پابندی عاید کردی جائے گی‘‘۔

ریفرینڈم : 92 فیصد عراقی کردوں کا آزادی کے حق میں ووٹ ، حیدر العبادی کی ریفرینڈم منسوخ کرنے کی اپیل

ریفرینڈم کے پہلے سرکاری نتائج کا اعلان کردیا گیا ہے ۔ فوٹو اے ایف پی

واضح رہے کہ کردستان میں کل اندراج شدہ ووٹروں کی تعداد 53 لاکھ کے لگ بھگ ہے۔ خود مختار عراقی کردستا ن کے تین صوبوں اربیل ، سلیمانیہ اور دہوک اور ان سے متصل تیل کی دولت سے مالا مال صوبے کرکوک میں آزادی کے نام سے اس ریفرینڈم کا انعقاد کیا گیا ہے۔ ان علاقوں میں 12072 پولنگ مراکز قائم کیے گئے تھے۔سوموار کی شام پولنگ کا عمل مکمل ہوتے ہی آزادی ریفرینڈم کے حق اور مخالفت میں ڈالے گئے ووٹوں کی گنتی شروع کردی گئی تھی۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز