شام پر امریکی حملہ : ایشیائی منڈیوں میں مندی ، اسرائیل اور سعودی عرب نے کی تائید ، روس اور ایران کی مذمت

Apr 07, 2017 03:25 PM IST | Updated on: Apr 07, 2017 03:25 PM IST

نیویارک : بشارالاسد کی حکومت کے خلاف حملوں کے بعد مارکیٹ میں باظاہر افراتفری کی صورت حال پیدا ہوگئی ہے اور ڈالر کی قدر میں بھی کمی آئی ہے ،سونے کی قیمت میں اضافہ ہوا ہے۔ رائٹر کی رپورٹ کے مطابق جاپان سے باہر ایم ایس سی آئی کے ایشیا پیسیفک حصص کا انڈیکس اعشاریہ 5 فی صد گر گیا۔

سرمایہ کاروں کو امریکی صدر ٹرمپ اور چین کے صدر شی جن پنگ کے درمیان ملاقات سے کافی توقعات تھیں تاہم اس وقت مارکیٹ میں صورت حال مختلف ہے۔ایشیائی مارکیٹوں میں سنگاپور اسٹاک ایکسچنچ پر سب سے زیادہ اثرات مرتب ہوئے جہاں چار سیشن کے دوران ایک فی صد خسارہ ہوا۔انڈونیشیا کی مارکیٹ 6 فی صد تک گر گئی جہاں ٹیلی کام کے شعبے میں سب سے زیادہ 1.2 فی صد کا نقصان ہوا۔

شام پر امریکی حملہ : ایشیائی منڈیوں میں مندی ، اسرائیل اور سعودی عرب نے کی تائید ، روس اور ایران کی مذمت

file photo

چھ اور سات اپریل کی درمیانی رات میں امریکہ نے کروز میزائلوں کے ذریعے شامی فضائیہ کے ایک اڈے کو نشانہ بنایا۔ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کا کہنا ہے کہ یہ حملے شامی صدر بشار الاسد کی حکومت کی طرف سےشامی باغیوں کے خلاف مبینہ کیمیائی ہتھیاروں کے استعمال کے جواب میں کئے گئے ہیں۔

اسرائیلی وزیر اعظم نیتن یاہو نے کہا ہے کہ صدر ٹرمپ نے اپنے الفاظ اور عمل کے ذریعے ایک واضح اور سخت پیغام دیا ہے کہ کیمیائی ہتھیاروں کا استعمال کسی صورت برداشت نہیں کیا جائے گا۔سعودی عرب نے شامی فضائیہ کے ہوائی اڈے پر امریکی میزائل حملوں کی تعریف کرتے ہوئے اسے صدر ٹرمپ کا باہمت اقدام قرار دیا ہے۔ سعودی وزارت داخلہ کے ایک بیان میں اس حملے کو ایک درست اقدام قرار دیا گیا ہے۔ترکی، جاپان، فرانس، برطانیہ اور کئی دیگر امریکی اتحادی ممالک نے بھی صدر ٹرمپ کے اس اقدام کی حمایت کی ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز