آسٹریلیا افغانستان میں بھیجے گا مزید فوجی ، ٹرن بل نے کہا : ناٹو کی تجویز زیرغور

May 12, 2017 03:55 PM IST | Updated on: May 12, 2017 03:56 PM IST

سڈنی: آسٹریلیا ئی وزیراعظم میلکم ٹرن بل نے آج کہا ہے کہ مزید فوجی افغانستان بھیجنے کی ناٹو کی درخواست پر غور کررہے ہیں کیونکہ امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ ناٹو قیادت والے مشن کے لئے کئی ہزار فوجیوں کا اضافہ کرنا چاہتے ہیں۔ ٹرنبل نے یہ نہیں بتایا کہ پچھلے ماہ افغانستان کے دورے کے دوران ناٹو کے فوجی حکام کی طرف سے انہیں کس طرح کی درخواست ملی تھی تاہم انہوں نے کہا کہ وہ اس خیال سےمتفق ہیں۔ ٹرن بل نے یہاں اخباری نمائندوں سے کہا ہم یقیناً وہاں اپنا کام بڑھانے پر راضی ہیں ۔ مگر ہمیں خطہ کے دیگر حصوں میں آسٹریلیائی دفاعی افواج کے وعدوں کو بھی نبھانا ہے اور دنیا کے دیگر حصوں میں بھی۔ انہوں نے کہا یہ بات بہت اہم ہے ہم اور ہمارے دیگر اتحادی افغانستان میں اپنی کوششیں جاری رکھیں اور مل کر کام کرتے رہیں۔

آسٹریلیا کے فی الحال 300 فوجی افغانستان میں تعینات ہیں مگر وہ صرف افغان فورسز کی تربیت اور انہیں مشورے دینے کا کام کرتے ہیں۔ اعلی امریکی انٹلی جنس افسر نے جمعرات کو کہا کہ اگر امریکہ اور اس کے اتحادیوں نے ناٹو کی فورس کے لئے اپنے فوجی نہ بڑھائے تو افغانستان کے حالات مزید بگڑ جائیں گے۔ افغان فورسز کو ناٹو اتحادی تربیت دے رہے ہیں۔ ان کا 16 سال کی لڑائی کے بعد بھی افغانستان کے اوپر ہلکا سا ہی کنٹرول ہے۔ طالبان اور القاعدہ داعش اور دیگر گروپوں کے باقی ماندہ عناصر ابھی تک بے قابو ہیں۔

آسٹریلیا افغانستان میں بھیجے گا مزید فوجی ، ٹرن بل نے کہا : ناٹو کی تجویز زیرغور

فروری میں افغانستان میں غیر ملکی افواج کے کمانڈر امریکی جنرل جان نکلس نے کانگریسی سماعت کو بتایا ہے کہ انہیں طالبان کے ستاتھ تعطل کو توڑنے کے لئے مزید کئی ہزار فوجیوں کی ضرورت ہے۔ اپریل میں رائٹر نے خبر دی تھی کہ ٹرمپ انتظامیہ افغانستان کا ازسر نو جائزہ لے رہی ہے اور امریکہ اور اتحادیوں کے مزید 3000 سے 5000 فوجی بھیجنے پر بات چیت کی جارہی ہے۔

امریکہ اور ناٹو اتحادیوں کو سب سے مزید فوجیوں کی درخواستیں مل رہی ہیں۔ تاکہ اس مشن کو مضبوط کیا جاسکے۔ اس وقت وہاں 13450 غیر ملکی فوجی تعینات ہیں۔ ان میں 6900 امریکی شامل ہیں جو افغان مسلم افواج کو تربیت اور مشورے مہیا کررہے ہیں تاکہ وہ افغانستان کا دفاع اور سلامتی خود سنبھالنے کے لائق ہوجائیں۔

امریکہ کے 1500 جوان انسداد دہشت گردی یونٹ کا بھی حصہ ہیں جو صرف دولت اسلامیہ جنگجو گروپ اور القاعدہ کے باقی بچے عناصر کو ہی نشانہ بناتے ہیں۔ ناٹو کے سیکریٹری جنرل جیسن اسٹولن برگ نے اس ہفتے کہا ہے کہ اتحاد مزید فوجیوں کے لئے درخواست کرے گاحالانکہ ناٹو رکن جرمنی نے مزید فوجی واپس افغانستان بھیجنے کو خارج از امکان قرار دیا ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز