برطانیہ کی سوکی سے میانمار میں مسلمانوں کے خلاف تشدد روکنے کی اپیل ، ہزاروں افراد نقل مکانی پر مجبور

برطانیہ نے کل امید ظاہر کی کہ میانمار کے لیڈر آنگ سان سو کی اپنی متعدد خوبیوں کا استعمال روہنگیا مسلم اقلیتوں کے خلاف تشدد کو ختم کرنے کے لئے کوشش کریں گی

Sep 03, 2017 10:10 AM IST | Updated on: Sep 03, 2017 10:10 AM IST

لندن : برطانیہ نے کل امید ظاہر کی کہ میانمار کے لیڈر آنگ سان سو کی اپنی متعدد خوبیوں کا استعمال روہنگیا مسلم اقلیتوں کے خلاف تشدد کو ختم کرنے کے لئے کوشش کریں گی جس کی وجہ سے ہزاروں لوگ ملک چھوڑنے پر مجبور ہوئے ہیں۔ اقوام متحدہ پناہ گزین ایجنسی (یو این ایچ سی آر) کے مطابق دہائیوں سے جاری تشدد کی وجہ سے 58،600 روہنگیا میانمار سے ہجرت کرکے بنگلہ دیش چلے گئے ہیں۔

برطانیہ کے وزیر خارجہ بورس جانسن نے کل کہا کہ آنگ سان سوکی صحیح معنوں میں ہمارے وقت کی سب قابل تحریک شخصیت ہیں لیکن افسوس روہنگیا کا مسئلہ برما کی ساکھ پر دھبہ ہے۔  انہوں نے کہا کہ مجھے امید ہے وہ اب ملک کو متحد کرنے،تشدد کو روکنے، مسلمانوں اور دیگر کمیونٹیز کے خلاف تعصب کو ختم کرنے کے لئے اپنے تمام تر قابل ذکر خوبیوں کا استعمال کریں گی۔

برطانیہ کی سوکی سے میانمار میں مسلمانوں کے خلاف تشدد روکنے کی اپیل ، ہزاروں افراد نقل مکانی پر مجبور

روہنگیا پناہ گزیں بنگلہ دیش کے ایک کیمپ کی طرف جاتے ہوئے، تصویر، رائٹرز: علامتی تصویر

Loading...

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز