شیوراج کی بھوک ہڑتال : کانگریس نے کیجریوال اسٹائل نوٹنکی بتایا تو سی پی ایم نے کہا : کریں گلی میں قتل بیٹھ چوراہے پر روئیں

Jun 10, 2017 11:22 AM IST | Updated on: Jun 10, 2017 11:23 AM IST

بھوپال : مدھیہ پردیش میں کسانوں کے مسائل پر بحث کے لئے وزیر اعلی شیوراج سنگھ چوہان کی طرف سے بھیل کے دسہرہ میدان سے حکومت چلانے کے اعلان پر اپوزیشن نے ان پر بھرپور حملہ کیا ہے ۔ کانگریس نے جہاں اسے کیجریوال اسٹائل کی نوٹنکی بتایا ہے تو سی پی ایم نے کرے گلی میں قتل بیٹھ چوراہے پر روئیں جیسا بتایا ہے ۔ ریاست میں کسان یکم جون سے قرض معافی اور فصل کے مناسب دام کی مانگ کو لے تحریک چلا رہے ہیں ۔ اس دوران مندسور میں پولیس فائرنگ میں چھ کسانوں کی موت ہو چکی ہے ۔ ریاست کے دیگر حصوں میں بھی کسان پرتشدد احتجاج و مظاہرہ کر رہے ہیں ۔ وزیر اعلی شیوراج سنگھ چوہان نے دسہرہ میدان میں کسان اور عوامی بحث کے مقصد سے حکومت چلانے اور امن بحالی کے لئے غیر معینہ بھوک ہڑتال کرنے کا جمعہ کو اعلان کیا تھا ۔

اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر اجے سنگھ نے کہا کہ ریاست میں کسان اپنے مطالبات کو لے کر سڑکوں پر ہیں ۔ ان مسائل کو حل کرنے کی بجائے ایک آئینی عہدہ پر بیٹھے وزیر اعلی نوٹنکی پر اتر آئے ہیں ۔ کیجریوال اسٹائل کی اس نوٹنکی میں چوہان ایک بار پھر کروڑوں روپے خرچ کریں گے ۔

شیوراج کی بھوک ہڑتال : کانگریس نے کیجریوال اسٹائل نوٹنکی بتایا تو سی پی ایم نے کہا : کریں گلی میں قتل بیٹھ چوراہے پر روئیں

انہوں نے سوال کیا کہ یہ غیر معینہ بھوک ہڑتال کس کے خلاف ہے ، اس کی اپنی حکومت یا عوام کے ۔ وہ کیجریوال انداز کی اس نوٹنکی میں اپنی برانڈنگ پر کروڑوں روپے خرچ کرنے والے ہیں ۔ حقیقت یہ ہے کہ وزیر اعلی ایک بار پھر اصل مسائل سے توجہ ہٹانے اور ریاست کے عوام کو گمراہ کرنے کے سستے ہتھکنڈے پر اتر آئے ہیں۔

مارکسی کمیونسٹ پارٹی (سی پی ایم) کے ریاستی سیکرٹری بادل سروج نے کہا کہ کسانوں کے قتل کے بعد بھی انہیں برا بھلا کہنے والی حکومت کے وزیر اعلی کا امن بحالی کے نام پر بھوک ہڑتال کا اعلان ایک خالص سیاسی منافقت ہے ۔ متاثرین ، احتجاج کرنے والے اور سوگوار کنبوں کے زخموں پر نمک چھڑکنا ہے ۔ یہ تو ٹھیک ویسا ہی ہے کہ کریں گلی میں قتل بیٹھ چوراہے پر روئیں ۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز