چترکوٹ ضمنی انتخابات : کانگریس نے بی جے پی کو 14 ہزار سے زائد ووٹوں سے ہرایا

مدھیہ پردیش میں ضلع ستنا کے چترکٹ ضمنی اسمبلی انتخابات میں آج کانگریس کے امیدوار نیلانشو چترویدی نے حکمراں بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے امیدوار شنکر دیال ترپاٹھی کو تقریبا چودہ ہزار ووٹوں سے شکست دیکر پارٹی کا قبضہ برقرار رکھا۔

Nov 12, 2017 03:40 PM IST | Updated on: Nov 12, 2017 03:40 PM IST

بھوپال: اترپردیش کی سرحد سے ملحق مدھیہ پردیش میں ضلع ستنا کے چترکٹ ضمنی اسمبلی انتخابات میں آج کانگریس کے امیدوار نیلانشو چترویدی نے حکمراں بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے امیدوار شنکر دیال ترپاٹھی کو تقریبا چودہ ہزار ووٹوں سے شکست دیکر پارٹی کا قبضہ برقرار رکھا۔ ریاست میں اسمبلی انتخابات سے ٹھیک ایک برس قبل ہوئے اس ضمنی الیکشن میں کانگریس کی جیت سے پارٹی کو ایک طرح سے نئی طاقت ملی ہے، وہیں ریاست میں چودہ برسوں سے حکمراں بی جے پی کو اس نتیجہ نے خوداحتسابی کے لئے مجبور کردیا ہے۔ اس سے کچھ مہینہ پہلے ضلع بھنڈ کے اٹیر اسمبلی حلقہ کے ضمنی الیکشن میں بھی کانگریس کے ہاتھوں بی جے پی کو شکست کا سامنا کرنا پڑا تھا۔

کانگریس کے روایتی گڑھ چترکٹ میں کانگریس کے امیدوار مسٹر چترویدی نے 19راونڈ کی گنتی کے بعد 66ہزار 810ووٹ حاصل کئے اور ان کے نزدیکی حریف بی جے پی کے مسٹر ترپاٹھی کو 52ہزار 600سے زائدووٹوں پر اکتفا کرنا پڑا ۔ اس طرح مسٹر چترویدی چودہ ہزار سے زائد ووٹوں سے کامیاب اعلان کئے گئے۔ کانگریس امیدوار کی سبقت ایک بار تو بیس ہزار سے زائد ہوگئی تھی لیکن گنتی کے آخری دور میں سبقت کا فرق کم ہوگیا۔

چترکوٹ ضمنی انتخابات : کانگریس نے بی جے پی کو 14 ہزار سے زائد ووٹوں سے ہرایا

چترکٹ میں مجموعی طورپر 12امیدوار تھے، لیکن اصل مقابلہ بی جے پی اور کانگریس امیدوار کے درمیان ہی رہا۔ اس درمیان ریاست میں حکمراں جماعت بی جے پی کے ریاستی صدر نندکمار سنگھ چوہان نے شکست قبول کرتے ہوئے کہاکہ اس کے اسباب کا جا ئزہ لیا جائے گا ۔ وہیں ریاستی کانگریس کے صدر ارون یادو اور اسمبلی میں اپوزیشن کے لیڈر اجے سنگھ نے پارٹی کی فتح پر خوشی کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ یہ تمام لیڈروں کی مشترکہ کوششوں اور جدوجہد نیز کارکنوں کے محنت اور لگن کا نتیجہ ہے۔

اس موقع پر سینئر لیڈر جیوتر آدتیہ سندھیا اور کملناتھ نے بھی خوشی ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ ریاست میں اب لوگ بی جے پی کی حکمرانی سے پریشان ہوچکے ہیں۔ یہ نتیجہ اس بات کی تصدیق کرتا ہے ۔ اس درمیان ریاستی کانگریس کے دفتر کے باہر سینکڑوں پارٹی کارکنوں اور لیڈر جمع ہوگئے اور انہوں نے ڈھول باجوں کے ساتھ اپنی خوشی کا اظہار کیا ۔ کئی کارکن ڈانس کرتے ہوئے بھی نظر آئے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز