سرکاری ملازمین کو ڈرا دھمكاكر غیر قانونی وصولی کرنے کے الزام میں دو خواتین سمیت چار فرضی صحافی گرفتار

Jul 30, 2017 01:03 PM IST | Updated on: Jul 30, 2017 01:03 PM IST

شيوپر: مدھیہ پردیش کے شيوپر ضلع میں پولیس نے سرکاری ملازمین کو خبر کے نام پر ڈرادھمكاكر غیر قانونی وصولی کرنے کے معاملے میں دو خواتین سمیت چار فرضی صحافیوں کو گرفتار کر لیا ہے۔

پولیس ذرائع کے مطابق چار دن پہلے برگوا تھانے کے پرتواڑا کے کچھ سرکاری اساتذہ نے پولیس سپرنٹنڈنٹ شوديال گوجر کو شکایت کی تھی کہ کچھ صحافیوں نے ویڈیو بنا کر اس کے اسکول کے بے ضابطگیوں کی شکایت کے نام پر پیسے لئے تھے اور بینک اکاؤنٹ میں بھی پیسے ڈلوائے تھے۔ شکایت کے بعد پولیس نے دو دن میں شوپري کے پوهري کے رہنے والے کرن بھارگو، مہاراج دھاکڑ، نوشين بانواور ششی کانت بھارگو کو فرضی صحافی بن کر وصولی کرنے کے الزام میں گرفتار کر لیا۔

سرکاری ملازمین کو ڈرا دھمكاكر غیر قانونی وصولی کرنے کے الزام میں دو خواتین سمیت چار فرضی صحافی گرفتار

بتایا گیا ہے کہ پکڑے گئے ملزمان نے گزشتہ کئی مهينوں میں سرکاری پنچایت سکریٹری، سرپنچ، اساتذہ، آنگن باڑی اہلکاروں سے شيوپر، مرینا، شوپري، دتيا اضلاع میں فرضی صحافی بن کرویڈیوبناکر 25 لاکھ سے زیادہ کی غیر قانونی وصولی کی بات قبول کی ہے۔ پولیس نے بتایا کہ ابھی اس گروہ کی ایک خاتون رکن فرار ہے۔پولیس جس کی تلاش کررہی ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز