سکما: وزارت داخلہ نے سی آر پی ایف سے مانگی رپورٹ، نکسلی حملے میں شہید ہوئے 25 جوان

Apr 25, 2017 11:16 AM IST | Updated on: Apr 25, 2017 11:16 AM IST

رائے پور۔ چھتیس گڑھ کے نکسل زدہ ضلع سکما میں پیر کو نکسلیوں کے حملے میں 25 جوان شہید ہو گئے اور سات جوان شدید زخمی ہو گئے۔ اس حملے نے ہر کسی کو ہلا کر رکھ دیا ہے۔ ادھر، ذرائع کے مطابق مرکزی وزارت داخلہ نے سی آر پی ایف سے سکما معاملہ میں ہوئی چوک پر رپورٹ مانگی ہے۔ اب اس معاملے میں مقامی لوگوں کے کردار بھی مشکوک نظر آ رہے ہیں۔ اس حملے میں زخمی ہوئے سی آر پی ایف کے جوانوں نے جو انکشاف کیا ہے، وہ حیران کر دینے والا ہے۔

اسپتال میں علاج کرا رہے سی آر پی ایف جوان شیر محمد نے نیوز 18 انڈیا کو بتایا کہ نکسلی حملے سے پہلے گاوں والوں نے ریکی کی تھی۔ اس وقت ہم لوگ کھانا کھا کر اٹھے ہی تھے۔ گاوں والوں کی ریکی کے بعد نکسلیوں نے حملے کو انجام دیا۔ پہلی فائرنگ نکسلیوں نے کی۔ اس کے بعد ہم نے بھی جوابی کارروائی کی۔

سکما: وزارت داخلہ نے سی آر پی ایف سے مانگی رپورٹ، نکسلی حملے میں شہید ہوئے 25 جوان

کئی نکسلی بھی مارے گئے

ایک دوسرے سی آر پی ایف جوان جتیندر نے بتایا کہ ہماری کارروائی میں بھی کئی نکسلی ڈھیر ہوئے۔ ویسے ہم لوگ تو نکسل واد سے لڑ ہی رہے ہیں، لیکن جب تک حکومت نہیں چاہے گی، نکسل واد ختم نہیں ہوگا۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز