جھارکھنڈ حکومت کے قیام کو ایک ہزار دن مکمل، مسلم اقلیت کے بیشتر مسائل ہنوز برقرار

Sep 12, 2017 09:28 PM IST | Updated on: Sep 12, 2017 09:28 PM IST

رانچی۔ جھارکھنڈ حکومت کے قیام کو ایک ہزار دن مکمل ہو گئے ہیں۔ حکومت کی جانب سےعوامی مفاد کے بڑے بڑے دعوے کئے جا رہے ہیں وہیں ریاست کی مسلم اقلیت حکومت کی کارکردگی سےغیر مطمئن ہے۔ رگھوور داس کی قیادت میں جھارکھنڈ کی بی جے پی حکومت کے قیام کو ایک ہزار دن مکمل ہوئے ہیں ۔ اس خوشی میں رانچی سمیت ریاست کے مختلف شہروں میں بڑے بڑے ہورڈنگ لگائے گئے ہیں ساتھ ہی رانچی میں منعقد ایک تقریب میں مرکزی وزیر نتن گڈکری کے ہاتھوں 5500 کروڑ روپیہ کے منصوبوں کا افتتاح کیا گیا ۔ اس موقع پر1000 دن کی کارگذاریوں پر مشتمل کتابچہ کا اجرا بھی کیا گیا ، وہیں مسلم دانشوران حکومت کی کارکردگی پرسوال اٹھا رہے ہیں۔

واضح رہے کہ موجودہ حکومت کے ذریعہ 65 کروڑ کی لاگت سے عالیشان نو منزلہ حج ہاؤس کی تعمیر کرائی جارہی ہے۔ ساتھ  ہی اسلام نگر کے متاثرین کی بازآبادی کاری کے لئے 33 کروڑ کی رقم منظور کی گئی لیکن مسلم سماجی و سیاسی کارکنان کا الزام ہے کہ مسلم اقلیت کے بیشتر مسائل کے حل کے لئے اب تک قدم نہیں اٹھائے گئے ہیں۔ ماہرین کے مطابق ریاست کے اسکولوں میں اردو اساتذہ کی خالی آسامیوں کو پر کرنے، مدرسوں کی جدید کاری اور گرانٹ فراہم کرنے کے ساتھ ساتھ مرکزی حکومت کے ایم ایس ڈی پی ۔ ایس پی کیو ای ایم ، نئی روشنی ۔ لیڈر شپ پروگرام جیسے منصوبوں کے تئیں حکومت غیرسنجیدہ رویہ اپنائے ہوئے ہے۔

جھارکھنڈ حکومت کے قیام کو ایک ہزار دن مکمل، مسلم اقلیت کے بیشتر مسائل ہنوز برقرار

ری کمنڈیڈ اسٹوریز