مدھیہ پردیش: چار ماہ کی معصوم بچی کی آبروریزی اور قتل کے معاملے میں نوجوان قصوروار

May 12, 2018 03:50 PM IST | Updated on: May 12, 2018 03:50 PM IST

اندور۔ مدھیہ پردیش کے ضلع اندور کی ایک عدالت نے چار ماہ کی معصوم بچی کی آبروریزی اور قتل کے معاملے میں محض تین ہفتے کے اندر سماعت مکمل کر کے ملزم کو آج مجرم قرار دیا۔ ایڈیشنل سیشن جج محترمہ ورشا شرما نے پچیس سالہ ملزم نوین کو مجرم قرار دیا۔ اسے آج ہی سزا سنائے جانے کا امکان ہے۔

اندور ضلع استغاثہ کے افسر اکرم شیخ نے بتایا کہ 20 اپریل کو یہاں مہاتما گاندھی روڈ ( ایم جی روڈ) تھانہ علاقہ کے شیوولاس پیلیس کے بیسمنٹ سے پولس کو چار ماہ کی معصوم بچی کی لاش ملی تھی۔ پوسٹ مارٹم رپورٹ سے واضح ہوا کہ بچی کی آبروریزی کرکے اس کوقتل کیا گیا ہے۔ ایم جی روڈ تھانہ پولس نے مزید تحقیقات کے لئے یہ کیس صرافہ تھانہ پولس کے حوالے کر دیا تھا۔

مدھیہ پردیش: چار ماہ کی معصوم بچی کی آبروریزی اور قتل کے معاملے میں نوجوان قصوروار

علامتی تصویر

 اکرم شیخ نے بتایا کہ صرافہ تھانہ پولس نے شک کی بنیاد پر نوین کو گرفتار کیا تھا۔ تفتیش میں اس نے اپنا جرم قبول کر لیا۔ اس کے بعد ایک ہفتے میں تفتیش مکمل کر کے پولیس نے کورٹ کے سامنے 27 اپریل کو فرد جرم پیش کیا تھا۔ عدالت نے دو درجن سے زیادہ گواہوں اور ثبوتوں کے بعد آج ملزم کو مجرم قرار دیا۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز