سپریم کورٹ کا فیصلہ صرف طلاق ثلاثہ تک ہی محدود نہیں ، شرعی معاملات پربھی ضرب : مولانا ولی رحمانی

Sep 10, 2017 01:15 PM IST | Updated on: Sep 10, 2017 05:55 PM IST

بھوپال : بھوپال میں آج سے آل انڈیا مسلم پرسنل لا ء بورڈ کی مجلس عاملہ کی میٹنگ شروع ہوگئی ہے ۔ میٹنگ میں شرکت کیلئے سبھی ممبران بھوپال پہنچ چکے ہیں ۔ تاہم اسے قبل بورڈ کی جانب سے مدھیہ پردیش کے بورڈ کے اراکین اور دانشوروں کا ایک اجلاس گزشتہ روز منعقد کیا گیا ۔

اس موقع پر آل انڈیا مسلم پرسنل لاءبورڈ کے جنرل سکریٹری مولانا ولی رحمانی نے کہا کہ طلاق ثلاثہ پر سپریم کورٹ کے فیصلہ کا پوری طرح سے استقبال نہیں کیا جا سکتا ہے۔مولا نا ولی رحمانی نے کہا کہ سپریم کا طلاق ثلاثہ پر جو فیصلہ آیا ہے ، وہ صرف طلاق ثلاثہ تک ہی محدود نہیں ہے بلکہ اس سے شرعی معاملات پر بھی ضرب لگتی ہے اور آئین کی دفعہ 25 میں دیئے گئے اقلیتوں کے حقوق پر کاری ضرب لگتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ کا فیصلہ طلاق ثلاثہ کے معاملہ تک ہی محدود نہیں ہے، اس فیصلہ کو وسیع تناظر میں دیکھنے کی ضرورت ہے ۔ 11 ستمبر کو بورڈ کی جانب سے طلاق ثلاثہ کو لے کر بھوپال کے اقبال میدان میں خواتین کے لئے جلسہ عام کا انعقاد کیا جائے گا۔

خیال رہے کہ بھوپال میں شروع ہوئی میٹنگ میں طلاق ثلاثہ کے معاملہ میں سپریم کورٹ کے فیصلہ کے بعد لائحہ عمل طے کیا جائے گا اور ساتھ ہی ساتھ بابری مسجد مقدمہ کو لے کر بھی سپریم کورٹ میں شروع ہونے والی بحث پر بھی بورڈ اپنا موقف طے کرے گا۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز