جھارکھنڈ : بیف کے شبہ میں 35 سالہ مسلم شخص کی جم کر پٹائی ، پولیس نے گوشت کا نمونہ جانچ کیلئے بھیجا

Jun 07, 2017 09:00 PM IST | Updated on: Jun 07, 2017 09:00 PM IST

دھنباد : بیف کے شبہ میں مسلم نوجوانوں کی پٹائی کا معاملہ تھمنے کا نام نہیں لے رہا ہے ۔ تازہ معاملہ بی جے پی حکمراں ریاست جھارکھنڈ میں پیش آیا ہے ، جہاں کوئلہ نگری دھنباد کے برواڈيه میں بھیڑ نے ایک مسلم نوجوان کی جم کر پٹائی کر دی ۔ بتایا جاتا ہے کہ اس کی پٹائی صرف اس وجہ سے کی گئی کہ وہ افطار پارٹی کیلئے گوشت لانے کی کوشش کر رہا تھا۔ معاملہ منگل کو پیش آیا ۔

ہندوستان ٹائمز کی رپورٹ متاثرہ نوجوان کی شناخت 35 سالہ عینلانصاری کے طور پر کی گئی ہے۔ پٹائی کے بعد انصاری کو پاٹلی پتر میڈیکل کالج اینڈ ہاسپٹل میں داخل کرایا گیا ہے، جہاں اس کی حالت مستحکم بتائی جاتی ہے ۔

جھارکھنڈ : بیف کے شبہ میں 35 سالہ مسلم شخص کی جم کر پٹائی ، پولیس نے گوشت کا نمونہ جانچ کیلئے بھیجا

علامتی تصویر

پولیس کے مطابق متاثرہ شخص مراڈيه کا رہنے والا ہے۔ اس کو 20 سے زیادہ لوگوں نے اس وقت گھیر لیا جب وہ اسکوٹر سے بروڈا گاؤں پار کر رہا تھا۔ لوگوں کو شک تھا کہ وہ اسکوٹر پر گوشت لے جا رہا ہے۔ تاہم جب بھیڑ اس پٹائی کر رہی تھی اسی دوران کچھ لوگوں نے اس کی اطلاع پولیس کی بھی دے دی۔ اس کے بعد متعلقہ تھانہ کے انچارج دنیش کمار نے موقع پر پہنچ کر انصاری کو بچایا ۔

ادھر متاثرہ انصاری کی اہلیہ شاہدہ بیگم نے ان الزامات کی تردید کی ہے۔ شاہدہ نے کہا کہ ہم لوگوں نے منگل کی شام گھر میں افطار پارٹی کا انعقاد کیا تھا، جس کے لئے انصاری گوشت لے کر آ رہے تھے ، لیکن گاؤں والوں نے غلط سمجھ لیا۔ اس دوران پولیس نے گوشت کے نمونہ کو جانچ کے لئے رانچی کی لیباریٹری میں بھیج دیا ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز