جھارکھنڈ میں آئے دن رونما ہونے والے فرقہ وارانہ واقعات پر سخت تشویش کا اظہار

Jun 07, 2017 10:20 PM IST | Updated on: Jun 07, 2017 10:20 PM IST

رانچی : جھارکھنڈ میں آئے دن رونما ہونے والے فرقہ وارانہ واقعات پر سخت تشویش کا اظہار کیا جا رہا ہے۔ دانشوران و سماجی کارکنان ایسے واقعات کے پس پردہ سیاسی فائدہ حاصل کرنے کی سوچی سمجھی سازش قرار دے رہے ہیں اور اس پر لگام لگانے کے لئے سیکولرذہن کے لوگوں کو آگے آنے پر زور دے رہے ہیں ۔

جھارکھنڈ کے مختلف علاقوں میں روز بروز فرقہ وارانہ منافرت کے واقعات دیکھنے اورسننے کو مل رہے ہیں ۔ گذشتہ شب رانچی کے سکرہٹو نامی علاقہ میں دو گروپوں کے درمیان معمولی بات کو لے کر جھڑپ ہوگئی، جس میں کئی لوگوں کے ساتھ ساتھ پولیس اہلکار بھی زخمی ہو گئے ۔ ایسے واقعات پر سماجی کارکنان نے افسوس کا اظہارکیا ہے ۔

جھارکھنڈ میں آئے دن رونما ہونے والے فرقہ وارانہ واقعات پر سخت تشویش کا اظہار

واضح رہے کہ حالیہ دنوں رانچی کے بڑگائی نامی علاقہ میں سوشل میڈیا پرمذہبی جذبات بھڑکانے کے نتیجہ میں فرقہ وارانہ کشیدگی پیدا ہو گئی تھی، لیکن حالات معمول پرآنے کے چند دنوں بعد ہی اسی علاقہ میں ایک عبادت گاہ کے باہر بارات پارٹی کے ذریعہ ڈانس کرنے اور پٹاخہ پھوڑے جانے پر دو گروپوں میں پھر جھڑپ ہوگئی، جس میں کئی افراد زخمی ہوئے ۔ اس معاملہ میں بی جے پی کے ریاستی صدر لکشمن گیلوآ کا بے حد نازیبا بیان بھی سامنے آیا تھا۔

ان معاملات میں ویسے انتظامیہ نے چابک دستی کا ثبوت پیش کرتے ہوئے حالات کو پرامن بنانے میں نمایاں کارکردگی کا مظاہرہ کیا۔ تاہم ریاست کے امن کی فضا کو پائیدار بنانے کے مقصد سے تمام مسلک کے علمانے متحدہ طور پر ایک پہل کی شروعات کی ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز