اے ٹی ایم سے پیسہ نکالتے وقت اگر نقلی نوٹ نکلا ، تو وہ نہیں بدلا جائے گا : آر بی آئی

آپ کو یہ جان کر حیرت ہوگی کہ اے ٹی ایم میں ایسا کوئی آلہ ہی نہیں لگا ہوتا ہے، جس سے ان مشینوں تک آئے جعلی نوٹوں کو پکڑا جا سکے۔ اے ٹی ایم سے نکلنے والے جعلی نوٹوں کو تبدیل کرنے کا بندوبست بھی نہیں ہے

Mar 05, 2017 05:54 PM IST | Updated on: Mar 05, 2017 05:54 PM IST

بھوپال : ان دنوں تمام بینکوں کے اے ٹی ایم سے جعلی نوٹ نکلنے کی خبریں آ رہی ہیں۔ آپ کو یہ جان کر حیرت ہوگی کہ اے ٹی ایم میں ایسا کوئی آلہ ہی نہیں لگا ہوتا ہے، جس سے ان مشینوں تک آئے جعلی نوٹوں کو پکڑا جا سکے۔ اے ٹی ایم سے نکلنے والے جعلی نوٹوں کو تبدیل کرنے کا بندوبست بھی نہیں ہے۔

ملک میں نومبر 2016 میں 500 اور 1000 روپے کے پرانے نوٹ منسوخ کئے جانے کے بعد 500 اور 2000 روپے کےنئے نوٹ مارکیٹ میں آئے ہیں۔ ان نئے نوٹوں میں بھی بڑے پیمانے پر خامیاں سامنے آ رہی ہیں۔ ایک طرف تکنیکی غلطی کی وجہ سے صارفین پریشان ہیں تو دوسری طرف مارکیٹ میں نقلی نوٹ بھی آ گئے ہیں۔ اس کے علاوہ بینکوں کی اے ٹی ایم مشینوں سے چورن پرنٹ والا نوٹ، جعلی اور بغیر نمبر والے نوٹوں کے نکلنے کا سلسلہ بھی جاری ہے۔

اے ٹی ایم سے پیسہ نکالتے وقت اگر نقلی نوٹ نکلا ، تو وہ نہیں بدلا جائے گا : آر بی آئی

مدھیہ پردیش کے نیمچ ضلع کے چندر شیکھر گوڑ نے نوٹ بندی سے پہلے اے ٹی ایم مشینوں سے نکلنے والے جعلی نوٹوں کے تناظر میں ریزرو بینک آف انڈیا سے تفصیلات طلب کی تھیں ۔ آر بی آئی کے نوٹ ایکسچینج اور جعلی نوٹ ویجلنس ڈویژن نے جو تفصیلات دی ہیں ، وہ انتہائی چونکانے والی ہیں۔

رپورٹس کے مطابق 100 روپے یا اس سے زیادہ کی رقم کے نوٹ تبھی مشین میں ڈالے جاتے ہیں، جب ان کے بینک نوٹ مشین سے جانچ پرکھ لیا جاتا ہے۔ نوٹوں کے صحیح ہونے پر ہی ان کو مشینوں میں ڈالا جاتا ہے۔

آر بی آئی نے اپنے جواب میں مزید کہا کہ آر بی آئی کی جانب سے اے ٹی ایم میں نقلی نوٹ ڈیٹیکٹر کے تناظر میں کوئی ہدایت جاری نہیں کی گئی ہے۔ گوڑ نے آر بی آئی سے پوچھا تھا کہ اگر اے ٹی ایم سے جعلی نوٹ نکلتا ہے ، تو اسے کیسے تبدیل کرا یا جا سکتا ہے؟ اس کے جواب میں آر بی آئی نے کہا کہ جعلی نوٹ کی کوئی قیمت نہیں ہوتی، اس لئے اس کا ایکسچینج نہیں ہو سکتا۔

آر بی آئی کی جانب سے اے ٹی ایم سے نکلنے والے جعلی نوٹوں کو لے کر ملے جواب کے بعد گوڑ نے وزیر اعظم کے دفتر کے عوامی شکایات محکمہ پر زور دیا کہ آر بی آئی کو ہدایت جاری کی جائے کہ جب بینک صارفین سے نوٹ کی اصلیت چیک کرنے کے بعد ہی لئے جاتے ہیں ، تو اے ٹی ایم مشین میں بھی ایسے آلہ لگے ہونے چاہئیں ، جس سے صارفین کو بھی یہ اطمینان رہے کہ اسے جو نوٹ مشین سے مل رہا ہے ، وہ حقیقی ہے۔

پی ایم او جی وی نے یکم اکتوبر 2016 کو گوڑ کی تجاویز کو آگے بڑھانے کی یقین دہانی کرائی تھی ۔گوڑ نے کہا کہ انہوں نے اے ٹی ایم مشینوں میں نقلی نوٹ پکڑنے کی ڈیوائس لگانے کیلئے پی ایم او جی وی پر زور دیا تھا، مگر اس پر اب تک عمل نہیں ہواہے۔

اب سوال یہ اٹھتا ہے کہ بینک تو جانچ کر صارفین کی طرف سے نوٹ لیتا ہے، مگر صارفین کو اے ٹی ایم سے نوٹ نکالتے وقت یہ سہولت نہیں ملتی۔ آر بی آئی کو بینکنگ اصلاحات کی پہل کے درمیان اے ٹی ایم مشین کو اپ گریڈ کر کے جانچنے کا کوئی ڈیوائس لگانا چاہئے ، تاکہ صارفین کو پریشانی سے بچایا جا سکے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز