کسی بھی ملک کی مداخلت یا دباو کی وجہ سے بند نہیں ہوگی لمبی دوری تک فضائیہ کی مشق : چین

Aug 25, 2017 11:40 AM IST | Updated on: Aug 25, 2017 11:41 AM IST

بیجنگ: چین کی وزارت دفاع نے کہا کہ چینی فضائیہ کے طویل دوری کی فوجی مشق کسی ملک کی مداخلت یا دباؤ کی وجہ سے بند نہیں کی جائے گی اور اگلے مرحلے کی مشق اسی طرح جلد ہی کی جائے گی۔ وزارت دفاع کے ترجمان نے آج بتایا کہ جمعرات کو ایئر فورس نے لمبی دوری تک فوجی مشق کی اور یہ دیر رات تک چلی۔ اس طرح کی عام مشق کو صرف بین الاقوامی قواعد و قوانین کے تحت کیا جاتا ہے اور یہ ملک کی عام ضروریات کا حصہ ہے۔ ترجمان نے ایئر فورس کے حوالے سے بتایا کہ خواہ کوئی بھی ملک کتنی بھی مداخلت کرلے اور کتنا ہی دباؤ بنایا جائے، چینی فضائیہ پہلے کی طرح اس قسم کی مشق کرتی رہے گی۔

چین گزشتہ کافی عرصہ سے اس طرح کی مشق کرتا آ رہا ہے اور ایئر فورس کے طیارے اکثر لمبی دوری تک پرواز کرتے ہیں جو کئی بار تائیوان سر حد اور جاپان کے سر حد علاقوں تک چلے جاتے ہیں۔ اس مہینہ کے شروع میں تائیوان فوج نے کہا تھا کہ اس کی سرحد کے نزدیک چینی فضائیہ کی تین دن تک چلی مشق کے پیش نظر اس نے اپنی فوجوں کو محتاط رہنے کا حکم دے دیا تھا۔

کسی بھی ملک کی مداخلت یا دباو کی وجہ سے بند نہیں ہوگی لمبی دوری تک فضائیہ کی مشق : چین

چین اس وقت اپنی فوج کو جدید بنانے پر زیادہ توجہ دے رہا ہے جس میں طیارہ بردار بحری جہاز وں کی تیاری اور اسٹیلتھ جنگی طیاروں کو فروغ شامل ہے۔ تائیوان کے پاس اس وقت زیادہ تر امریکہ میں بنے ہتھیار ہیں اور وہ امریکہ سے مزید جدید ہتھیار دینے کی گزارش کررہا ہے ۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز