مہاجرین پر پابندی کا تنازعہ: ’عدالتیں جانبدار نہیں سیاسی ہیں‘: ٹرمپ

واشنگٹن۔ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے مہاجرین اور سات مسلم اکثریتی ملکوں کے شہریوں کے امریکہ میں داخلے پر پابندی کے محاذ پر عد لیہ پر محتاط نکتہ چینی کرتے ہوئے کہا ہے کہ ملکی عدالتیں کسی کی طرفداری نہین کرتیں لیکن ان پر بہت زیادہ سیاسی رنگ چڑھ گیا ہے۔

Feb 09, 2017 08:01 PM IST | Updated on: Feb 09, 2017 08:01 PM IST

واشنگٹن۔ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے مہاجرین اور سات مسلم اکثریتی ملکوں کے شہریوں کے امریکہ میں داخلے پر پابندی کے محاذ پر عد لیہ پر محتاط نکتہ چینی کرتے ہوئے کہا ہے کہ ملکی عدالتیں کسی کی طرفداری نہین کرتیں لیکن ان پر بہت زیادہ سیاسی رنگ چڑھ گیا ہے۔ انہوں نے آج بدھ کے روز قانون نافذ کرنے والے ملکی اداروں کے افسروں سے اپنے ایک خطاب میں کہا کہ ’’میری رائے میں اس وقت ہماری سلامتی خطرے میں ہے۔ میں کبھی بھی کسی عدالت کو جانبدار نہیں کہنا چاہوں گا۔ اس لیے میں یہ کہہ بھی نہیں رہا کہ عدالتیں جانبدار ہیں۔ لیکن۔۔۔ بظاہر ہماری عدالتیں بہت سیاسی رنگ اختیار کر چکی ہیں۔ اس لیے امریکی نظام انصاف کے لیے یہ بات بہت اچھی ہو گی کہ وہ (جج صاحبان) ایک بیان پڑھیں اور وہ کریں جو صحیح ہے‘‘۔ صدر ٹرمپ کا استدلال یہ ہے کہ امریکہ اور امریکی عوام کی سلامتی کو یقینی بنانے کے لیے ضروری ہے کہ امیگریشن پابندیاں نافذ رہیں۔

ادھر سان فرانسیسکو کی اپیل کورٹ نے سوال کیا ہے کہ آیا امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی سفری پابندیاں مسلمانوں کے خلاف امتیازی ہیں؟ امریکی محمکہ انصاف کے مطابق یہ پابندیاں مذہبی بنیادوں پر عائد نہیں کی گئی تھیں۔ اپیل کورٹ کے ترجمان ڈیوڈ میڈن نے بتایا ہے کہ متوقع طور پر رواں ہفتے کے اواخر تک عدالت اپنا فیصلہ سنا دے گی۔ اگر یہ اپیل کورٹ ماتحت عدالت کے فیصلے کو نہیں بدلتی تو یہ معاملہ سپریم کورٹ تک جا سکتا ہے۔ اپیل کورٹ جائزہ لے رہی ہے کہ آیا صدر ٹرمپ کی طرف سے مہاجرین اور سات مسلم ممالک کے شہریوں کی امریکا آمد پر پابندی کا ایگزیکٹیو آرڈر غیر آئینی یا نہیں۔

مہاجرین پر پابندی کا تنازعہ: ’عدالتیں جانبدار نہیں سیاسی ہیں‘: ٹرمپ

گیٹی امیجیز

واضح رہے کہ ریپبلکن صدر ٹرمپ نے ایک صدارتی حکم نامے کے ذریعے ستائیس جنوری کو تین ماہ کے لیے مذکورہ پابندیاں لگائی تھیں۔

آج اپنے خطاب میں انہوں نے امریکہ کی وفاقی عدالتوں کے ججوں پر اس لئے سخت تنقید کی کہ مہاجرین اور سات مسلم اکثریتی ملکوں کے شہریوں کے امریکہ میں داخلے پر انہوں نے جو پابندی عائد کی تھی، اس پر پورے ملک میں عمل درآمد ریاست واشنگٹن میں سیئٹل کی ایک وفاقی عدالت کے جج نے معطل کر دیا تھا۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز