وہ ڈچ رکن پارلیمنٹ جس نے کہا تھا- ’اسلام جھوٹ ہے، اور قرآن زہر‘، ہوا مشرف بہ اسلام

ڈچ سیاست داں یورام فان کلاویرین اپنے اسلام مخالف بیانات لئے دنیا بھرمیں جانے جاتے ہیں۔

Feb 08, 2019 05:45 PM IST | Updated on: Feb 08, 2019 06:12 PM IST

ڈچ پیپل نیدرلینڈ کے شہریوں کو کہا جاتا ہے۔ یہاں کے سابق لیڈر یورام فان کلاویرین آج کل خبروں میں ہیں۔ بتا دیں کہ یورام اپنے اسلام مخالف بیانات کے لئے دنیا بھرمیں جانے جاتے ہیں۔ کلاویرین نیدرلینڈ میں گیرٹ ولڈرس پارٹی پی وی وی کی جانب سے 2010 سے 2014 تک رکن  پارلیمنٹ رہے۔ یہ پارٹی دنیا بھر میں اسلامی مخالف کاموں کے لئے جانی جاتی ہے۔

کلاویرین، ولڈرس کی پارٹی پی وی وی سے 2014 میں الگ ہو گئے تھے۔ اس کے بعد انہوں نے نیدرلینڈ میں اپنی الگ پارٹی شروع کی تھی۔ لیکن 2017 کے نیشنل الیکشن میں وہ سیٹ جیتنے میں ناکامیاب ہوئے۔ اس کے بعد انہوں نے سیاست سے دوری اختیار کر لی۔

وہ ڈچ  رکن پارلیمنٹ جس نے کہا تھا- ’اسلام جھوٹ ہے، اور قرآن زہر‘، ہوا مشرف بہ اسلام

یورام کچھ دنوں پہلے تک اسلام کے بارے میں تمام غلط بیانات دیتے رہتے تھے لیکن اب انہوں نے اسلام قبول کر لیا ہے۔ این آر سی اخبار کے مطابق کلاویرین کی کہی بات، ’’ اسلام جھوٹ ہے اور قرآن زہر‘ ایک وقت کافی خبروں میں رہی تھی۔

Loading...

مشرف بہ اسلام ہونے کے بعد این آر سی اخبار سے انٹرویو میں یورام نے کہا، ’’ میں اپنی تنقید (اسلام جھوٹ ہے اور قرآن زہر) پر شرمندہ ہوں۔ انہوں نے کہا، یہ بات پوری طرح غلط ہے۔ ساتھ ہی یورام نے یہ بھی کہا،’’ یہ پی وی وی پارٹی کی پالیسی تھی، جو کچھ غلط تھا اسے کسی نہ کسی طریقہ سے اسلام سے جوڑا جانا تھا‘۔

اسلام مخالف تنقیدوں کے لئے دنیا بھر میں خبروں میں رہنے والے یورام ایک اسلام مخالف کتاب ’ فرام کریسچینیٹی ٹو اسلام ان دی ٹائم آف ٹیرر‘ کے لئے ریسرچ کر رہے تھے۔ کتاب شائع ہونے سے پہلے ہی انہوں نے گزشتہ 26 اکتوبر کو اسلام قبول کیا۔

تقریبا 40 سالہ ڈچ سیاست داں یورام فان کلاویرین نے  مشرف بہ اسلام ہونے پر ڈچ اخبارات کو بتایا،  میرا من بدل گیا۔ مجھے طویل عرصے سے اس کی تلاش تھی۔ یہ میرے لئے مذہبی طور سے گھر واپسی جیسا ہے۔ انہوں نے ڈچ ریڈیو سے کہا، ’’ کتاب لکھنے کے دوران میں نے ایسی ایسی چیزیں جانی، جس سے اسلام کے لئے میرے تمام خیالات ڈگمگا گئے۔ مشرف بہ اسلام ہونے کے بعد ایک انٹرویو میں انہوں نے بتایا، ’’ میرے مسلمان ہو جانے سے میری اہلیہ کو کوئی پریشانی نہیں ہے۔ میری بیوی اس بات کو قبول کرتی ہیں  کہ میں اب مسلمان ہوں‘‘۔

 

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز