بہار میں طالبہ سے 18 نے کیا ریپ، پرنسپل اور 2 اساتذہ سمیت 15 طلباء پر کیس

بہار کے چھپرا کے پرساگڑھ میں ایک نجی اسکول میں 9 ویں کی طالبہ کے ساتھ گینگ ریپ کا معاملہ سامنے آیا ہے۔

Jul 07, 2018 11:57 AM IST | Updated on: Jul 07, 2018 11:57 AM IST

بہار کے چھپرا کے پرساگڑھ میں ایک نجی اسکول میں 9 ویں کی طالبہ کے ساتھ گینگ ریپ کا معاملہ سامنے آیا ہے۔ ایکما تھانہ کے پرساگڑھ واقع دپیشور اسکول کی طالبہ انجو (تصوراتی نام) نے اپنے اسکول کے پرنسپل اور دو اساتذہ سمیت 15 دوسرے طالب علموں پر بھی گینگ ریپ کا الزام لگایا ہے، جس کے بعد پولیس نے ملزم پرنسپل اودے سنگھ سمیت چار افراد کو گرفتار کر لیا ہے۔

اس معاملہ میں کل 18 افراد کے خلاف مقدمہ درج کیا گیا ہے۔ چار گرفتار لوگوں میں اسکول کا پرنسپل، ایک استاد اور دو نابالغ طالب علم شامل ہیں۔

بہار میں طالبہ سے 18 نے کیا ریپ، پرنسپل اور 2 اساتذہ سمیت 15 طلباء پر کیس

سارن میں طالبہ کی اجتماعی عصمت دری

معلومات کے مطابق، انجو کے ساتھ یہ سب 2017 سے ہو رہا تھا۔ متاثرہ کے مطابق، اسکول کے تین طلباء نے بیت الخلا میں اس کی عصمت دری کی اور اس کا ویڈیو بنا لیا۔ ویڈیو بنانے کے بعد ان طالب علموں نے طالبہ کو بلیک میل کر دیگر طالب علموں کے ساتھ بھی جنسی تعلق قائم کرنے پر مجبور کیا۔ پھر دوسرے طالب علموں نے بھی اس کی عصمت دری کرنا شروع کر دیا۔

جب متاثرہ نے اس کی شکایت اسکول انتظامیہ سے کی تو اسکول انتظامیہ نے کوئی کارروائی نہیں کی۔ اسکول انتظامیہ کے لوگوں نے نہ صرف اس گھناونے کام پر پردہ ڈالا بلکہ وہ خود بھی طالبہ کی عصمت دری کرنے لگے۔ بار بار اس کے ساتھ اسکول میں یہ گھناونا کام ہونے لگا۔ اس سے پریشان آکر طالبہ نے اپنے اہل خانہ کو یہ بات بتائی اور پھر معاملہ پولیس کے پاس پہنچا۔

سارن ایس پی ہرکشور رائے نے اس معاملہ میں کارروائی کرتے ہوئے ڈی ایس پی راجکمار سنگھ کو تحقیقات کی ذمہ داری سونپی اور اسکول کے پرنسپل سمیت 4 افراد کو گرفتار کر لیا گیا۔ پولیس نے طبی جانچ کے لئے طالبہ کو صدر اسپتال بھیجا ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز