بہارمدرسہ ایجوکیشن بورڈ نے وسطانیہ 2016 کے نتائج اب تک نہیں کئے جاری

Jun 01, 2017 01:05 PM IST | Updated on: Jun 01, 2017 01:05 PM IST

پٹنہ۔ ایک سال سے بہار مدرسہ ایجوکیشن بورڈ وسطانیہ کے  نتائج کو دبا کر بیٹھا ہے۔  واضح رہے کہ 2016 میں امتحان منعقد کیا گیا تھا لیکن اب تک رزلٹ جاری نہیں کیا گیا۔ اس سے ناراض مدرسہ طلباء یونین نے بورڈ کے خلاف تحریک چلانے کی دھمکی دی ہے۔ طلباء چاہے کسی بھی مضامین اور درجہ کا امتحان دیں، انکو نتیجہ جاننے کا بنیادی حق حاصل ہے  ۔ لیکن اس بات سے بہار مدرسہ ایجوکیشن بورڈ کوکوئی مطلب نہیں ہے۔ 2016 میں وسطانیہ کا امتحان منعقد کیا گیا تھا ۔ اس کا رزلٹ اب تک جاری نہیں کیا گیا ہے جبکہ2017 میں امتحان دینے والے طلباء اپنا فارم بھر چکے ہیں۔ ایسے میں2016 میں وسطانیہ کے امتحان میں جو طالب علم ناکام ہوجائیں گے پھر انہیں اس سال دوبارہ فارم بھرنے کا موقع تک نہیں ملیگا۔ 2016میں قریب 1.30 لاکھ طلباء نے وسطانیہ کا امتحان دیا تھا جنکا رزلٹ جاری نہیں ہوا ہے۔

خیال رہے کہ فی طالب علم بورڈ  300 روپیہ امتحان کے نام پر فیس لیتا ہے، ایسے میں 2016 کے امتحان میں بورڈ کو طلباء سے 3.90 کروڑ روپیہ کی آمدنی ہوئی تھی ۔ نتائج کے متعلق سوال کرنے پر بورڈ کے سکریٹری کہتے ہیں کہ وہ بروقت رزلٹ جاری کریں گے یعنی بورڈ کے مطابق ابھی بھی تاخیر نہیں ہوئی ہے۔

بہارمدرسہ ایجوکیشن بورڈ نے وسطانیہ 2016 کے نتائج اب تک نہیں کئے جاری

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز