مغربی بنگال میں فرقہ وارانہ تشدد کے پیچھے بی جے پی کا ہاتھ : ممتابنرجی

Jul 10, 2017 07:18 PM IST | Updated on: Jul 10, 2017 07:18 PM IST

کلکتہ : مغربی بنگال کی وزیرا علیٰ ممتا بنرجی نے آج مرکزی حکومت پر الزام عاید کیا ہے کہ ریاست میں فرقہ وارانہ ہم آہنگی کے ماحول کو نقصان پہنچانے کیلئے مرکز نے بین الاقوامی سرحدوں سے غیر ملکیوں کو اسمگلنگ کرنا شروع کردیا ہے ۔ ممتا بنرجی نے کہا کہ بین الاقوامی سرحدوں کی نگرانی کرنے کی ذمہ داری مرکزی حکومت کی ہے ،مگرحکومت نے اسے کھول دیا ہے تاکہ باہری یہاں آکر فرقہ وارانہ ہم آہنگی کے ماحول کو نقصان پہنچائیں ۔

ممتا بنرجی نے مرکزی حکومت کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ آپ نے سرحدوں کی حفاظت کرنی چھوڑ دی ہے تاکہ غیر ملکی یہاں داخل ہوسکیں اور ریاست کے ماحول کو نقصان پہنچاسکیں اور اب ہم سے کہتے ہیں کہ رپورٹ پیش کریں ۔وزیر اعلیٰ نے کہا کہ چوں کہ ہم حکومت میں ہیں اس لیے سازش کے باوجود ہم یہاں امن وامان کا ماحول قائم کرنے میں کامیاب ہیں۔

مغربی بنگال میں فرقہ وارانہ تشدد کے پیچھے بی جے پی کا ہاتھ : ممتابنرجی

ممتا بنرجی، فائل فوٹو: گیٹی امیجیز

انہوں نے کہا کہ ریاست اور مرکز دونوں کی حکومتیں عوام کی منتخب کردہ ہیں ۔تو پھر سوال ہے کہ مرکزی حکومت پھر ریاستی حکومت کے خلاف سازش کیوں کررہی ہیں ۔ہمارے خلاف جپوٹ کیوں گڑھے جارہے ہیں ۔ہم ان سوالوں کے جواب چاہتے ہیں ۔ ایک پروگرام میں وزیر اعلیٰ نے کہا کہ ریاست کو مرکزی حکومت کی طرف سے کوئی مدد نہیں مل رہی ہے۔ممتا بنرجی نے کہا کہ مجھے یہ کہنے میں دکھ ہورہا ہے کہ عدالت کی ہدایت کے باوجود مرکزی حکومت نے دارجلنگ میں فورسیس کی تعیناتی میں کوئی مدد نہیں کی ہے ۔

وزیر اعلیٰ نے کہا کہ ہم نے کبھی بھی تقسیم کی سیاست قبول نہیں کی ہے ۔مگر مرکزی حکومت تقسیم کی سیاست کررہی ہے۔انہوں نے کہا کہ اس کے پیچھے بی جے پی کا ہاتھ ہے ۔مگر انہیں معلوم ہونا چاہیے بنگال کو تقسیم کرنا کوئی آسان ٹاسک نہیں ہے ۔ہمارے پاس تاریخ ہے ۔انہوں نے کہا کہ ریاست کے باہر کے لوگ بنگال میں فرقہ وارانہ فسادات برپا کرنے کی کوشش کررہے ہیں ۔وزیرا علیٰ نے کہا کہ دارجلنگ اور بدوریا میں بھی حالات کو خراب کرنے والوں میں باہری لوگ شامل تھے۔ ممتا بنرجی نے کہا کہ بی جے پی نے سوشل میڈیا پر جعلی تصویرں پوسٹ کرکے بنگال میں فرقہ وارانہ فسادات برپاکرنے کی کوشش کی ہے ۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز