جامعۃ القاسم دارالعلوم الاسلامیہ سپول کے زیر اہتمام افطار کٹ تقسیم 

Jun 11, 2017 06:09 PM IST | Updated on: Jun 11, 2017 06:09 PM IST

سپول(پریس ریلیز)بہارکی مشہوردینی درسگاہ جامعۃ القاسم دارالعلوم الاسلامیہ سپول کے زیر اہتمام آج افطار کٹ تقسیم کیا گیا۔جامعہ سے جاری پریس بیان کے مطابق تقریبا 300 ضرورت مند روزہ داروں میں افطار اور سحر کی اشیاءخوردونوشجن میں چنا ، چور، چاول، دال، آٹا، تیل، موڑھی، نمک، کھجور، چینی، شربت روح افزا، بیسن، چائے پتی، سوئی ، سوجی، ماچس اور مسالجات شامل ہیں۔

جامعۃ القاسم کے اساتذہ اور ملازمین نے تمام اشیاء کو بہت ہی سلیقے اور احترام سے ایک بڑے تھیلے میں رکھ کر روزہ داروں کو پیش کیے۔بتادیں کہ ہرسال رمضان کریم کے موقع پر جامعۃ القاسم کی نگرانی میںضرورت مندافراد کی مدد کی جاتی ہے اور اس موقع پر سیکڑوں افراد یہاں سے ملنے والے افطار کٹ اور عید گفٹ سے مستفید ہوتے ہیں اور رمضان المبارک اور عیدالفطر کی خوشیاں مناتے ہیں۔اس موقع پر بانی جامعۃ مفتی محفوظ الرحمن عثمانی نے تمام افراد کو رمضان کریم اور عیدالفطر کی مبارکباد پیش کرتے ہوئے کہاکہ انسانوں کی فلاح و بہبود ہی زندگی کا مقصدہے۔انہوں نےکہاکہ مذہب اسلام نہ صرف مسلمان بلکہ تمام انسانوں کے لئے فلاح و بہبود کا ایک مشن لے کر آیا ہے اور اس کی تعلیمات میں خدمت انسانیت کے واضح اصول ہیں۔ معاشرے کے غرباء و مساکین ، معذور، یتیم ، مسافر، بے کس، مستحقین یا وہ افراد جو کسی قدرتی آفت میں پھنسے ہوں یا وہ لوگ جو ظلم و جبر کا شکار ہوں تو ایسے تمام انسانوں کی مدد کرنا اور انہیںپر مسرت ذندگی مہیا کرنا ہی فلاح و بہبود کا اصل مقصد سمجھا جاتا ہے۔

جامعۃ القاسم دارالعلوم الاسلامیہ سپول کے زیر اہتمام افطار کٹ تقسیم 

مفتی عثمانی نے کہاکہ رمضان کریم غم خواری اور غم گساری کا مہینہ ہے،اس مہینےمیں غم گساری اور ہم دردی کے احساسات انسان میں پیدا ہوتے ہیں۔ اس ماہ کی خصوصیات کا ذکر کرتے ہوئے رسول اکرمؐ نے فرمایا ’’یہ صبر کا مہینہ ہے اور صبر کا بدلہ جنّت ہے۔ ‘‘ انہوں نے کہا کہ ضرورت اس بات کی ہےکہ ہم اس ماہ میں جو بھی نیکی کریں وہ خالصتاً اﷲ کی رضا کے لیےکریں، اگر نیّت ریا کاری اور شہرت کی ہوگی تو ہمار ی نیکیاں برباد ہوجائیں گی۔ خلوص و للہیت سے ادا کی گئیں نیکیوں اجر ستر گنا ملتا ہے، اسی لیے اس ماہ کو نیکیوں کا موسم بہار کہا جاتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ حدیث پاک میں آتا ہے کہ ’’جس نے اس ماہ میں کسی روزہ دار کو افطار کرایا تو یہ اس کے گناہوں کی مغفرت اور آتش دوزخ سے آزادی کا ذریعہ ہوگا اور اس کو روزہ دار کے برابر ثواب دیا جائے گا‘ بغیر اس کے کہ روزہ دار کے ثواب میں کوئی کمی کی جائے۔‘‘مفتی عثمانی نے کہا کہ ہماری ہم دردی کے مستحق معاشرے کے وہ لوگ ہیں جنہیں عام دنوں میں دو وقت کی روٹی بھی میسّر نہیں آتی، اگر آپ ان کا روزہ افطار کرائیں تو اس سے معاشرے کے اندر جو بھائی چارے کی فضا بنے گی اس کا ہم اندازہ بھی نہیں کرسکتے۔انہوں نے کہاکہ ماہ رمضان واقعی نیکیوں کی برسات کا مہینہ ہے، اس مہینے میں اگر ہم صحیح معنوں میں محنت کرکے اپنے نفس کی تربیت کرلیں تو اس کا اور کوئی بدل نہیں ہوسکتا اور اگر ہم اس ماہ میں بھی اﷲ کی رحمت سمیٹنے اور اپنی بخشش کرانے سے محروم رہ جائیں تو پھر ہم سے بڑا بدنصیب اور کوئی نہیں ہوسکتا۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز