وزیراعلی کی سرکاری رہائش گاہ کے پتے کا غلط استعمال کرنے پر لالو کی بیٹی کے خلاف پٹنہ ہائی کورٹ میں عرضی

Apr 13, 2017 06:54 PM IST | Updated on: Apr 13, 2017 06:54 PM IST

پٹنہ: بہار کے وزیراعلی کی سرکاری رہائش گاہ کے پتے کا غلط استعمال کرنے کو لے کر آج پٹنہ ہائی کورٹ میں راشٹریہ جنتا دل(آر جے ڈی)صدر لالو پرساد یادو کی بیٹی چندا یادو کے خلاف مفاد عامہ کی عرضی دائر کی گئی۔ ہائی کورٹ کے سینئر وکیل منی بھوشن پرتاپ سینگر کی جانب سے دائر مفاد عامہ کی عرضی میں کہا گیا ہے کہ سال 2005 کے بعد سے مسٹر لالو پرساد یادو اور محترمہ رابڑی دیوی وزیراعلی کے عہدے پر نہیں رہے ہیں ، لیکن ان کی بیٹی چندا یادو نے 2014 تک ڈیلائٹ مارکٹنگ کمپنی پرائیویٹ لیمیٹڈ کے ڈائریکٹر کے طورپر غیر قانونی طورسے وزیراعلی کی سرکاری رہائش گاہ ایک آنے مارگ کے پتے کا استعمال کیا۔

انہوں نے کہا کہ اصولوں کے مطابق وزیراعلی رہائش گاہ کااستعمال وہاں رہنے والے یا پہلے سے رہ رہے لوگ کاروباری سرگرمی کے لئے نہیں کرسکتے ہیں۔ عرضی میں عدالت سے درخواست کی گئی ہے کہ وہ معاملے کی جانچ کی ہدایت دیں کہ کس کی اجازت یا لاپرواہی کی وجہ سے وزیراعلی کی حفاظت کی اندیکھی کر کے ایسی سرگرمی کی اجازت دی گئی۔اس کے ساتھ ہی عدالت حکم دے کہ مستقبل میں وزیراعلی کی رہائش گاہ سے ایسی سرگرمی نہ ہو۔

وزیراعلی کی سرکاری رہائش گاہ کے پتے کا غلط استعمال کرنے پر لالو کی بیٹی کے خلاف پٹنہ ہائی کورٹ میں عرضی

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز