ریپ کے بعد حاملہ ہو گئی تھی 5 ویں کی نابالغ طالبہ، ڈاکٹروں نے کرایا اسقاط حمل 

پولیس نے کارروائی کرتے ہوئے ملزم پرنسپل اروند کمار عرف راج سنگھانیا اور ٹیچر ابھیشیک کمار کو گرفتار کر کے جیل بھیج دیا تھا۔

Oct 02, 2018 10:25 AM IST | Updated on: Oct 02, 2018 01:07 PM IST

راجدھانی پٹنہ کے ایک پرائیویٹ اسکول میں پڑھنے والی پانچویں کلاس کی نابالغ طالبہ کا پی ایم سی ایچ میں اسقاط حمل کرایا گیا۔ ڈاکٹروں کی 5 رکنی ٹیم کی دیکھ ریکھ  میں یہ عمل چلا۔ کئی ماہ تک بچی کے ساتھ ریپ سے وہ حاملہ ہو گئی تھی۔ جب معاملے کا انکشاف ہوا تو متاثرہ کی ماں نے گہار لگائی تھی جس کے بعد پیر کو بچی کا محفوظ اسقاط حمل کروایا گیا۔ اس سے پہلے متاثرہ کا ڈی این اے سیمپل جانچ کیلئے جا چکا ہے۔

کیا تھا معاملہ

ریپ کے بعد حاملہ ہو گئی تھی 5 ویں کی نابالغ طالبہ، ڈاکٹروں نے کرایا اسقاط حمل 

ریپ کے ملزم

پٹنہ کے دانا پور کے ایک پبلک اسکول کے پرنسپل اور اکاؤنٹینٹ نے پانچویں میں پڑھنے والی لڑکی سے مسلسل نو ماہ تک ریپ کیا تھا۔ ا س دوران بچی کے جسم میں تبدیلی سے گھر والوں کو شک ہوا۔ جانچ کے دوران اس بات کا انکشاف ہوا کہ  متاثرہ لڑکی حاملہ ہو گئی اور تب جاکر لڑکی کے گھر والوں کو اس بات کا پتہ لگا۔

اہل خانہ نے اس واقعے کے بعد پٹنہ کے پھلواری شریف تھانے میں معاملہ درج کروایا جس کے  بعد پولیس نے کارروائی کرتے ہوئے ملزم پرنسپل اروند کمار عرف راج سنگھانیا اور ٹیچر ابھیشیک کمار کو گرفتار کر کے جیل بھیج دیا تھا۔

اس معاملے میں متاثرہ اور ملزمان کا ڈی این اے ٹیسٹ کرایا گیا تھا۔ واقعے کے بعد ثبوت مٹانے کے لئے بند پڑے اسکول کو آگ کے حوالے کرنے کی بھی کوشش کی گئی تھی۔ پولیس سمیت خواتین کمیشن کی ٹیم بھی معاملے کی مسلسل نگرانی کر رہی ہے۔

پیر کو خواتین کمیشن کی رکن اوشا ودھارتھی متاثرہ کو دیکھنے پی ایم سی ایچ گئیں ۔ انہوں نے کہا کہ کمیشن اس پورے معاملے کو سنجیدگی سے دیکھ رہا ہے۔ خواتین کمیشن کی بھی مانگ ہے کہ اس معاملے میں جلد از جلد جانچ کی جائے اور قصورواروں کو سزا دلائی جائے۔

یہ بھی پڑھیں : پرنسپل اور ٹیچر 9 مہینے تک کرتے رہے 5 ویں کلاس کی طالبہ کا ریپ، لیتے تھے سیلفیاں، حاملہ ہونے پر ہوا انکشاف

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز