مغربی بنگال : آر ایس ایس کی ضمنی انتخاب کو گئو کشی کے نام پر ہندو اور مسلم رنگ دینے کی کوشش ، ووٹنگ کل

Apr 08, 2017 06:11 PM IST | Updated on: Apr 08, 2017 06:17 PM IST

کلکتہ: جبراً حصول اراضی کے خلاف تحریکوں کا مرکز رہا مشرقی مدنی پور کے جنوبی کانتی اسمبلی حلقے میں ضمنی انتخاب میں اس مرتبہ سیاسی ایشوز یا پھر ترقیاتی کاموں سے کہیں زیادہ پولرائزیشن اور ہندو و مسلمان کی سیاست حاوی نظر آرہی ہے۔ جنوبی کانتی اسمبلی حلقہ میں 9اپریل کو ضمنی انتخاب ہونے ہیں اور 13اپریل کو گنتی ہوگی۔یہ سیٹ ممبر اسمبلی دیبندو ادھیکار ی کے استعفیٰ کی وجہ سے خالی ہوئی ہے۔ وہ تملوک سیٹ سے لوک سبھاکیلئے منتخب ہوچکے ہیں ۔ترنمول کانگریس، بی جے پی، کانگریس اور بایاں محاذ سے سی پی آئی نے اپنے امیدوار کھڑے کیے ہیں ۔حکمراں جماعت ترنمول کانگریس، اپوزیشن کانگریس، بی جے پی اور بایاں محاذ کے مطابق اس مرتبہ انتخاب میں فرقہ وارانہ پولرائزیشن کی سیاست حاوی ہے۔جب کہ اس حلقے میں 20فیصد مسلم ووٹ ہیں ۔

حالیہ دنوں میں رام نومی کو لے کر ترنمول کانگریس اور آر ایس ایس ۔بی جے پی کے درمیان ٹکراؤ نے بھی ضمنی انتخاب کو متاثر کیا ہے ۔مدنی پور میں آر ایس ایس تنظیمی طور پر بہت ہی مستحکم ہے ۔ترنمول کانگریس کی امیدوار و سابق ریاستی وزیر چندر یما بھٹا چاریہ نے کہا کہ بی جے پی ۔آر ایس ایس ملک اور بنگال کو فرقہ پرستی کے رنگ میں رنگنا چاہتی ہے ۔جب کہ بنگال کی تاریخ فرقہ وارانہ ہم آہنگی کی تارریخ رہی ہے ۔ہماری اصل لڑائی فرقہ پرستی سے ہے اور ہم اس کو ختم کرنا چاہتے ہیں۔

مغربی بنگال : آر ایس ایس کی ضمنی انتخاب کو گئو کشی کے نام پر ہندو اور مسلم رنگ دینے کی کوشش ، ووٹنگ کل

ترنمول کانگریس کے لیڈر کے مطابق بی جے پی اور آر ایس ایس گزشتہ چند مہینوں سے اس حلقے میں گئو ذبیحہ کے خلاف مہم کے نام پر ہندو اور مسلمانوں کو تقسیم کرنے کی کوشش کررہی ہے ۔اس کے علاوہ اسکول میں ایک مسلم لڑکا کو صرف مذہب کی بنیاد پر آنے سے روک دیا گیا ۔جب کہ بی جے پی امیدوار ترنمول کانگریس پر ہندؤں کے ساتھ جانبداری برتنے کا الزام عاید کررہی ہے ۔

کانگریس اور بایاں محاذ نے بی جے پی اور ترنمول کانگریس پرفرقہ وارانہ منافرت کے نام پر مہم چلانے کا الزام عاید کرتے ہوئے کہا ہے کہ یہ لوگ پولرائزیشن کی سیاست کررہے ہیں ۔ریاستی کانگریس کے صدر ادھیر رنجن چودھری نے کہا کہ دونوں کے پاس ترقیاتی ایشوز نہیں ہے اس لیے کوئی ہندو کو متحد کرنے کی کوشش کررہا تو کوئی مسلمانوں کو ۔

خیال رہے کہ یہاں ترنمول کانگریس کافی مضبوط ہے ۔یہ ریاستی وزیر ٹرانسپورٹ شوبھندو ادھیکاری کا گڑھ کہا جاتا ہے ۔ان کے بھائی دیبندو ادھیکاری نے 2016میں یہاں سے 28,0000ووٹوں سے جیت حاصل کی تھی۔اس وقت کانگریس اور بایاں محاذ نے اتحاد کرکے انتخاب لڑا تھا مگر اس مرتبہ دونوں نے اپنے امیدوار کھڑے کیے ہیں ۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز