مغربی بنگال : 24 پرگنہ فساد میں زخمی شخص کی موت ، شرپسندوں کا درگاہ اور مسلمانوں کی دوکانوں پر حملہ

Jul 06, 2017 09:45 PM IST | Updated on: Jul 06, 2017 09:45 PM IST

کلکتہ: فیس بک پر متنازع پوسٹ کے بعد شمالی 24پرگنہ بشیرہاٹ سب ڈویژن کے بادوریا میں فرقہ وارانہ تشدد میں زخمی 65سالہ شخص کی آج کلکتہ میں موت ہوگئی ہے ۔دوسری جانب فساد زدہ علاقہ میں آج ایک بار پھر تشدد کے واقعات رونما ہونے کی خبر ہے ۔ بدھ کے دن اپنے گھر لوٹ رہے کارتک گھوش بھیڑ کے حملے کی زد میں آگئے تھے۔بنگلہ دیش سرحد سے 12کلو میٹر دوری پر واقع اس علاقے میں سنیچر کی شام سے ہی حالات کشیدہ ہیں ۔سوموار کو سیکڑوں افراد مشتمل بھیڑ نے متنازع پوسٹ کرنے والے کے خلاف جلوس نکالا جو بعد میں تشدد میں تبدیل ہوگیا۔اس واقعہ میں کل 12 افراد زخمی ہوگئے تھے۔

آج جمعرات کو ایک بھیڑ نے درگاہ اور مسلمانوں کی دوکانوں پر حملہ کردیا۔پولس کی ایک بڑی ٹیم نے سخت مشقت کے بعد اس بھیڑ کو منتشر کیا ۔آنسو گیس بھی چھوڑنے پڑے ۔بھیڑنے ٹائر میں آگ لگادی جب کہ مقامی لوگوں کا دعویٰ ہے کہ بڑے پیمانے پر بم بھی پھینکے گئے ہیں ۔

مغربی بنگال : 24 پرگنہ فساد میں زخمی شخص کی موت ، شرپسندوں کا درگاہ اور مسلمانوں کی دوکانوں پر حملہ

خیال رہے کہ گیارہویں جماعت میں زیر تعلیم طالب علم نے اپنے فیس بک اکاؤنٹ پر خانہ کعبہ اور نبیؐ کی توہین آمیز تصویریں پوسٹ کی تھی ۔اس سے ناراض مسلمانوں کی بھیڑ نے کئی دوکانوں میں آگ لگادی تھی۔اس پورے علاقے میں گزشتہ کئی دنوں سے حالات خراب ہیں اور انتظامیہ نے انٹر نیٹ سروس بند کردیا ہے۔

دو فرقوں کے درمیان تشدد پرسیاست تیز ہوگئی ہے۔بی جے پی ممتا بنرجی پر مسلمانوں کی منھ بھرائی کرنے کا الزام عاید کررہی ہے ۔بی جے پی کے ممبران پارلیمنٹ کا ایک وفد جس میں میناکشی لیکھی، ستیہ پال سنگھ اور اوم پرکاش ماتھر شامل ہوں گے جمعہ کو متاثرہ علاقے کا دورہ کرے گا اور بی جے پی کے صدر امیت شاہ کو رپورٹ پیش کرے گا۔تاہم ریاستی حکومت نے متاثرہ علاقے میں سیاسی جماعتوں کے لیڈروں کے داخلے پر پابندی عاید کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

مجموعی طور پر بادوریا میں حالات آج پرامن ہے ۔کئی علاقوں میں دوکانیں اور معمولات زندگی بحال ہوگئی ہے ۔ٹرانسپورٹ بھی بحال ہوگیا ہے ۔ دوسر ی جانب کلکتہ میں آر جی کار جہاں کارتک گھوش کی موت ہوگئی تھی ۔کو دیکھنے کیلئے بی جے پی کے ریاستی صدر دلیپ گھوش اور بی جے پی کے قومی سیکریٹری وجے ورگیہ پہنچے توترنمول کانگریس اور بی جے پی حامیوں کے درمیان جھڑپ ہوگئی۔بی جے پی نے ترنمول کانگریس کے ورکروں پر گھوش کی گاڑی میں توڑ پھوڑ کرنے کا الزام عاید کیا ہے ۔ بی جے پی نے دعویٰ کیا ہے کہ بشیرہاٹ کے جس باشندے کی موت ہوئی ہے ، وہ بی جے پی بلاک صدر تھے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز