ایک ایسا گاؤں جہاں 100 سال سے کوئی نہیں پیتا شراب اور نہ ہی کھاتا ہےگوشت– News18 Urdu

ایک ایسا گاؤں جہاں 100 سال سے کوئی نہیں پیتا شراب اور نہ ہی کھاتا ہےگوشت

درگ: چھتیس گڑھ کے بھلائی میں ایک ایسا گاوں ہے جہاں یہاں گزشتہ سو سالوں سے کسی نے نہ توشراب پی ہے اور نہ ہی یہاں کوئی گوشت خور ہے۔

Aug 31, 2015 04:26 PM IST | Updated on: Aug 31, 2015 05:04 PM IST

درگ: چھتیس گڑھ کے بھلائی میں ایک ایسا گاوں ہے جہاں یہاں گزشتہ سو سالوں سے کسی نے نہ توشراب پی ہے اور نہ ہی یہاں کوئی گوشت خور ہے۔

اس گاؤں کا نام کاسہی ہے اور اس کی سب سے بڑی خاصیت یہ ہے کہ اس گاؤں کے لوگ کسی بھی بھگوان پریقین نہیں رکھتے ہیں ۔ یہاں کبیر کی روایتوں کو مانا جاتا ہے ۔ یہاں کے لوگوں کو بت پرستی میں یقین نہیں ہے ۔ کبیر کے نقش قدم پر چلتے ہوئے اس گاؤں میں بت پرستی پر پابندی عائد ہے۔

ایک ایسا گاؤں جہاں 100 سال سے کوئی نہیں پیتا شراب اور نہ ہی کھاتا ہےگوشت

آپ کو بتا دیں کہ ملک بھر میں جہاں ایک طرف رکشا بندھن کا تہوار منایا جا رہا تھا، وہیں اس گاؤں کے لوگ شراب پر پانبدی کی صد سالہ تقریب منا رہے تھے ۔ كاسهي گاؤں کی آبادی محض 450 ہے ، لیکن یہ گاؤں جانا جاتا ہے کے اپنے قوانین اور ضوابط کے لئے ۔

عام طور پر دیکھا جاتا ہے کہ شراب پر پابندی لگانے کے لئے سوشل اداروں یا انتظامیہ کی مدد لی جاتی ہے، لیکن اس گاؤں کے اپنے خود ہی سماجی ادارے ہیں اور انتظامیہ بھی ہے ۔ انہوں نے خود ہی شراب پر پابندی اور گوشت خوری پر روک لگا رکھی ہے۔

Loading...

گاؤں والوں کا کہنا ہے کہ اس پابندی کے پیچھے کوئی کہانی یا روایت نہیں ہے ۔ ہمارے آبا واجداد نے یہ مان کر ہی پابندی عائد کی تھی کہ شراب ملک اور معاشرے کو تباہ کردیتی ہے، تو اس کو ترک کرنا ضروری ہے ۔ بس یہی ہماری زندگی کا اصل منتر بن گیا ہے اور اب گاؤں کے تمام لوگ اس پر عمل کر رہے ہیں ۔

Loading...