ملک کی ان ریاستوں میں تیوہارکی طرح منایا جاتا ہے لڑکیوں کا "پہلا پیریڈ"۔

Jun 24, 2018 07:19 PM IST | Updated on: Jun 24, 2018 07:21 PM IST

پیریڈ (ماہ واری) سے ہرلڑکی کو گزرنا پڑتا ہے۔ پیریڈ کے وقت عورت کے جسم میں ہارمونس ریلیز ہوتے ہیں۔ ان ہارمونس کو سائنس کی زبان میں ایگ (ای جی جی) کہتے ہیں۔ جب یہ ایگ ٹوٹتا ہے تو اس میں جمع خون اورٹشوز وجائینا ( کے ذریعہ جسم سے باہر نکلتے ہیں۔ اس نیچرل (فطری عمل) کو پیریڈ (ماہ واری) کہتے ہیں ۔

پیریڈ کو لڑکی کی بلوغت کا آغاز کے طور پرنشاندہی  کی جاتی ہے۔ ملک کے کئی حصوں میں پہلے پیریڈ کو لے کر کئی روایتیں عام ہیں۔

ملک کی ان ریاستوں میں تیوہارکی طرح منایا جاتا ہے لڑکیوں کا

جب سینیٹری پیڈس جیسی کوئی چیز نہیں تھی تو خواتین کو پانچ دنوں (یا ایک ہفتہ) تک کھلے میں خون بہنے کے لئے مجبوراً رہنا پڑتا تھا۔ اس دوران انہیں راحت دینے کے لئے کچھ رسومات شروع کی گئیں، جس سے ان دنوں میں ان کے جسم کو آرام مل سکے۔ بدلتے وقت اور سائنس کی رفتار کےساتھ پیریڈ کے لے مناسب انتظامات تو دستیاب ہوئے، لیکن کچھ پچھڑے علاقوں میں یہ روایتیں آج بھی ہیں۔

p1

کرناٹک میں "پہلے پیریڈ" کے دوران گھر اور پڑوس کی عورتیں لڑکی کی آرتی اتارتی ہیں اور گانے گاتی ہیں۔ اس کے بعد لڑکی کو تل اورگڑسے بنی ڈش چگلی اونڈے ( کھانے کےلئے دی جاتی ہے۔ مانا جاتا ہے کہ اسے کھانے سے پیریڈ میں خون کا بہاو بغیر کسی رکاوٹ کے ہوگا۔ اس دوران پوجا میں چڑھائے جانے والے ناریل اورپان کے پتے گھر آئے مہمانوں کو دیئے جاتے ہیں۔

p2

ری کمنڈیڈ اسٹوریز