قطر کی کھانے پینے کی اشیاء کی فراہمی کیلئے ترکی اور ایران سے بات چیت

Jun 07, 2017 11:23 PM IST | Updated on: Jun 07, 2017 11:23 PM IST

دوحہ: قطر، متحدہ عرب امارات اور سعودی عرب کے اس کے ساتھ تمام سفارتی اور تجارتی تعلقات ختم کرلینے کے بعد کھانے کی اشیاء اور پینے کے پانی کی ممکنہ کمی سے نمٹنے کیلئے اب ایران اور ترکی کے ساتھ بات چیت کر رہا ہے۔

ایک افسر نے بتایا کہ متحدہ عرب امارات اور سعودی عرب، قطر کو کھانے پینے کی اشیاء کے سب سے بڑے سپلائر ہیں۔ ان کے ساتھ روابط منقطع ہوجانے کے بعد ملک میں کھانے پینے کی ممکنہ کمی سے نمٹنے کیلئے ترکی، ایران اور کچھ دیگر ممالک سے بات چیت کی جا رہی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ ان ممالک سے قطر ایئرویز کے مال بردار طیاروں کے ذریعہ کھانے پینے کی اشیاء اور پینے کے پانی کی فراہمی کرائی جائے گی۔

قطر کی کھانے پینے کی اشیاء کی فراہمی کیلئے ترکی اور ایران سے بات چیت

حکام نے بتایا کہ سعودی عرب، بحرین، یمن، متحدہ عرب امارات، ماریطانیہ، مصر اور مالدیب نے قطر پر دہشت گردی کی پشت پناہی کا الزام لگاتے ہوئے اس سے سفارتی اورتجارتی تعلقات منقطع کرلئے ہیں۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز