ریاض : خادم الحرمین الشریفین شاہ سلمان بن عبدالعزیز نے کہا ہے کہ سعودی عرب مسلم دنیا کا دل ہے ۔اس کو دنیا بھر سے تعلق رکھنے والے مسلمانوں کی خوشیوں ، دکھوں اور تکالیف کا احساس ہے ۔وہ مسلم امہ میں اتحاد ، تعاون اور یک جہتی کے فروغ کے لیے کوشاں ہے اور پوری دنیا میں امن اور سلامتی کا خواہاں ہیں۔

سعودی عرب مسلمانوں کا دل ، اس کو امت کے دکھ ، درد اور خوشی کا احساس ، اتحاد کیلئے ہمیشہ کوشاں : شاہ سلمان

Loading...

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے طابق شاہ سلمان منیٰ میں شاہی دیوان میں حج کا فریضہ ادا کرنے والے سربراہان ریاست اور حکومت اور خادم الحرمین الشریفین کے شاہی مہمانوں کے اعزاز میں منعقدہ سالانہ استقبالیہ تقریب سے خطاب کررہے تھے۔انھوں نے حج کا فریضہ ادا کرنے والے تمام معزز مہمانوں اور دنیا بھر سے آئے ہوئے حجاج کرام کو مبارک باد دی۔

انھوں نے کہا کہ ’’ اللہ تعالیٰ نے اس ملک اور اس کے عوام کو الحرمین الشریفین اور حج اور عمرے کے لیے آنے والے زائرین کی خدمت کا اعزاز بخشا ہے ۔ سعودی عرب حجاج کرام کوحج کی ادائی کے لیے ہر ممکن سہولتیں مہیا کرنے کی غرض سے تمام انسانی اور مادی وسائل بروئے کار لا رہا ہے۔

شاہ سلمان نے کہا کہ ’’ ہم الحرمین الشریفین کو ایک مربوط طریقے سے اعلیٰ خدمات مہیا کرنے کے لیے پُرعزم ہیں۔مسجد الحرام اور مسجد نبویﷺ کے تحفظ اور سکیورٹی کے لیے اقدامات کررہے ہیں اور اس ضمن میں شاہ عبدالعزیز کے دور حکومت سے مسلسل ترقیاتی کاموں اور بھرپور کوششوں کا سلسلہ جاری ہے‘‘۔

ان کا کہنا تھا کہ دہشت گردی کے بازو ؤں نے مقدس مقامات کو ان کے تقدس کو ملحوظ رکھے بغیر نقصان پہنچانے کی کوشش کی لیکن سعودی مملکت نے اللہ کی مدد اور اپنے بھائیوں اور دوستوں کے تعاون سے دہشت گردی کے خاتمے کے لیے نمایاں کامیابیاں حاصل کی ہیں اور دہشت گردی کے ہر طرح کے ذرائع کا بڑے پختہ عزم کے ساتھ استیصال کیا ہے۔

اس موقع پر مسلم ممالک کے سربراہان حکومت و ریاست اور شاہی مہمانوں کی جانب سے اسلامی جمہوریہ موریتانیہ کے وزیر برائے اسلامی امور اور روایتی تعلیم احمد ولد اہل داؤد نے تقریر کی۔انھوں نے اس مرتبہ حج کے لیے بہترین معیاری انتظامات کرنے پر سعودی عرب کے اقدامات کو سراہا۔ انھوں نے سعودی عرب کی جانب سے حجاج کرام کو مناسک کی ادائی کے لیے مہیا کی جانے والی سہولتوں کی بھی تعریف کی ہے۔

استقبالیہ تقریب میں سوڈان کے صدر عمر حسن البشیر ، گیمبیا کے صدر آدما بارو ، کومروس کے صدر عثمان غزالی ، یمن کے نائب صدر علی محسن الاحمر ، مصری وزیراعظم شریف اسماعیل اور مفتی ِاعظم شوقی علام ، عراق کی نمائندگان کونسل ( قومی اسمبلی ) کے اسپیکر سلیم الجبوری ، اردن کے ایوان نمائندگان کے اسپیکر عاطف تراونح ، نائیجیریا کی سینیٹ کے صدر بوکلا سراکی ، نیجر کی قومی اسمبلی کے صدر عیسینی طنی ، موریشس کے نائب وزیراعظم شوکت علی سدھون ، شہزادہ ہاشم بن الحسین ، بنگلہ دیش کے سابق صدرحسین محمد ارشاد ، روسی فیڈریشن کی وفاقی کونسل کی وفاقی اسمبلی کے ڈپٹی چئیرمین الیاس عماخنوف ، افغانستان کی اعلیٰ امن کونسل کے چیئرمین محمد کریم خلیلی ، لبنان کے سابق وزیراعظم نجیب میقاتی اور دوسرے اسلامی ممالک کے سینیر اعلیٰ عہدے دار اور حکام شریک تھے۔