حلال و حرام سےمتعلق بے جا فتوی جاری کرنا مناسب نہیں، اس کام کو جید مفتیان اور علما تک ہی محدود رکھا جانا چاہیے : امام کعبہ شیخ صالح بن حمید

امام حرم نے مزید کہا کہ حلال و حرام کا فرق قرآنی آیات میں آیا ہے اور سعودی عرب کی اسلامی فقہ اکیڈمی اس موضوع پر کئی ایک کانفرنس و نشستوں کے انعقاد کے بعد کئی ایک سفارشات بھی جاری کر چکی ہے

Oct 26, 2017 01:37 PM IST | Updated on: Oct 26, 2017 01:37 PM IST

اسلام آباد : امام کعبہ شیخ ڈاکٹر صالح بن حمید نے کہا ہے کہ حلال خوراک کا موضوع صرف کھانے تک محدود نہیں، پینے کی اشیاء اور ادویہ کے معاملات بھی بحث طلب ہیں۔ حرام خوراک کے جسم پر مضر اثرات مرتب ہوتے ہیں۔ امام حرم نے مزید کہا کہ حلال و حرام کا فرق قرآنی آیات میں آیا ہے اور سعودی عرب کی اسلامی فقہ اکیڈمی اس موضوع پر کئی ایک کانفرنس و نشستوں کے انعقاد کے بعد کئی ایک سفارشات بھی جاری کر چکی ہے۔

ساتھ ی ساتھ امام کعبہ نے یہ بھی کہا کہ حلال اور حرام کے حوالے سے بے جا فتوی جاری کرنا مناسب اقدام نہیں ہے اور اس کام کو جید مفتیان اور علماء تک ہی محدود رکھا جانا چاہیے۔ امام کعبہ نے ان خیالات کا اظہار اپنے دورہ پاکستان کے دوران بین الاقوامی اسلامی یونیورسٹی کے فیصل مسجد کیمپس میں یونیورسٹی کی فیکلٹی آف شریعہ اینڈ لا کے زیر اہتمام حلال خوراک کے موضوع پر دو روزہ عالمی کانفرنس کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

حلال و حرام سےمتعلق بے جا فتوی جاری کرنا مناسب نہیں، اس کام کو جید مفتیان اور علما تک ہی محدود رکھا جانا چاہیے : امام کعبہ شیخ صالح بن حمید

Loading...

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز