بالاکوٹ ائیر اسٹرائک پر پھر سامنے آیا پاکستان کا جھوٹ، میراج سے 10 منٹ لیٹ تھا ایف 16– News18 Urdu

بالاکوٹ ائیر اسٹرائک پر پھر سامنے آیا پاکستان کا جھوٹ، میراج سے 10 منٹ لیٹ تھا ایف 16

ایئر فورس نے ائیر اسٹرائک پر ایک رپورٹ پیش کی ہے جس کے مطابق چھ میں سے کل پانچ اہداف کو نشانہ بنایا گیا تھا

Apr 25, 2019 11:34 AM IST | Updated on: Apr 25, 2019 11:34 AM IST

پلوامہ حملے کے بعد 26 فروری کو ہندوستانی فضائیہ نے پاکستان کے خیبر پختونخوا صوبے کے بالاکوٹ میں ائیر اسٹرائک کی تھی۔ ایئر فورس نے ائیر اسٹرائک پر ایک رپورٹ پیش کی ہے جس کے مطابق چھ میں سے کل پانچ اہداف کو نشانہ بنایا گیا تھا۔ اس رپورٹ کے ذریعہ پہلی بار ایئر فورس نے نشانہ بنائے گئے ٹھکانوں کی تعداد بتائی۔ آپریشن سے متعلق ایک رپورٹ کے مطابق، پاکستان کے ہائی الرٹ پر رہنے کے بعد بھی مشن پورا ہوا۔

بتا دیں کہ 14 فروری کو سینٹرل ریزرو پولیس فورس کے قافلے پر فدائین حملے میں 40 جوان شہید ہوگئے تھے۔ جس کے جواب میں ہندوستان نے دہشت گرد تنظیم جیش محمد کے ٹھکانوں  پر حملہ کیا تھا۔ ہندوستانی فضائیہ نے میراج 2000 سے دہشت گرد تنظیم کے ٹھکانوں پر حملہ کیا جس کے بعد پاکستانی ایئر فورس کے 16 طیارے اڑائے تھے۔

بالاکوٹ ائیر اسٹرائک پر پھر سامنے آیا پاکستان کا جھوٹ، میراج سے 10 منٹ لیٹ تھا ایف 16

میراج 2000 کی فائل فوٹو

انگریزی اخبار 'ہندوستان ٹائمز' کی ایک رپورٹ کے مطابق، ایئر فورس نے ایک رپورٹ دی ہے جس میں اس آپریشن کی تفصیلات شئیر کی گئی ہیں۔ ساتھ ہی اس آپریشن کے تمام مثبت اور منفی پہلوؤں کا ذکر کیا گیا ہے، تاکہ مستقبل کے کسی بھی آپریشن میں ان کا خیال رکھا جا سکے۔ اخبار کے مطابق، رپورٹ پر تبادلہ خیال فضائیہ کی ایک اعلیٰ سطحی میٹنگ میں کیا گیا۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ ہندوستانی فضائیہ کے میراج 2000 حملہ کرنے کے فورا بعد لوٹ آیا اور تب تک پاکستان’ کم از کم 8 فائٹر بیس‘ سے اپنے جہاز ہٹانے کو مجبور ہو گیا۔ اس میں سرگودا میں مشف، کمارا اٹوک میں منہاس اور چکوال میں مراد جہاز شامل ہیں۔ نام شائع نہ کرنے کی شرط پر سیکورٹی سے منسلک ایک آفیسر نے بتایا کہ ’’ پاکستانی فضائیہ اور ہندوستانی فضائیہ کے جنگی طیاروں کے درمیان تقریبا 10 منٹ کا فاصلہ تھا‘‘۔

آفیسر نے یہ بھی بتایا کہ پاکستان کو جواب کی امید تو تھی لیکن اسے یہ اندازہ نہیں تھا کہ ہم فضائی راستہ اختیار کریں گے۔ نام نہ ظاہر کرنے کی شرط پر ایک دوسرے سینئر آفیسر نے بتایا کہ’’ انٹلی جینس کی کوالٹی کی مدد سے ہمیں تین گھنٹے کے اندر پاکستان میں حملہ کرنے میں مدد ملی۔ رپورٹ میں ان پائلٹوں کی بھی ستائش کی گئی جو اس مشن پر تھے۔ مانا جا رہا ہے کہ جو پائلٹ اس مشن پر گئے تھے انہیں اعزاز سے نوازا جائے گا۔ ملک بھر کے الگ الگ ہوائی ٹھکانوں سے فضائیہ کے تقریبا 6000 آفیسر اس مشن میں شامل تھے۔