کشمیرپرپھرالگ تھلگ پڑا پاکستان، شاہ محمود قریشی نےکہا- کسی نے نہیں دیا میرا ساتھ

پاکستان کے وزیرخارجہ نےاپنےملک کے باشندوں کوکشمیرکولےکرکسی طرح کےمغالطے میں نہیں رہنےکا مشورہ دیتے ہوئے کہا ہندوستانی حکومت کےفیصلے کےخلاف اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل ہی نہیں مسلم دنیا کی حمایت حاصل کرنا بھی پاکستان کےلئےآسان نہیں ہوگا۔

Aug 13, 2019 09:32 PM IST | Updated on: Aug 13, 2019 09:55 PM IST
کشمیرپرپھرالگ تھلگ پڑا پاکستان، شاہ محمود قریشی نےکہا- کسی نے نہیں دیا میرا ساتھ

شاہ محمود قریشی نےکہا کہ جموں وکشمیر پر یواین ایس سی اراکین کی حمایت حاصل کرنے کے لئے پاکستانیوں کو نئی جدوجہد شروع کرنی ہوگی۔

پاکستان کے وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے اپنے ملک کے باشندوں کوکشمیرکولےکر کسی طرح کے مغالطے میں نہیں رہنےکوکہا ہے۔ انہوں نےکہا کہ جموں وکشمیر کو خصوصی ریاست کا درجہ دینے والے دفعہ -370 کوہٹانے کے ہندوستانی حکومت کے فیصلےکے خلاف اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل ہی نہیں مسلم دنیا کی حمایت حاصل کرنا بھی پاکستان کےلئے آسان نہیں ہوگا۔

کوئی ہاتھوں میں مالا لئے کھڑا نہیں ہوگا

Loading...

شاہ محمود قریشی نے پاکستان مقبوضہ کشمیر(پی اوکے) کے مظفرآباد میں کہا کہ پاکستانیوں کو یواین ایس سی اراکین کی حمایت حاصل کرنے کے لئے نئی جدوجہد شروع کرنی ہوگی۔ آپ کومغالطے میں نہیں رہنا چاہئے۔ ہمارے لئے یواین ایس سی (یواین ایس سی) میں کوئی بھی ہاتھوں میں مالا لئے کھڑا نہیں ہوگا۔ کوئی بھی وہاں آپ کا انتظارنہیں کرے گا۔ دفعہ 370 کے زیادہ ترشقوں کو ختم کرنے مودی حکومت کے فیصلے کے بعد پاکستان نے کہا تھا کہ وہ نئی دہلی کے فیصلےکے خلاف اقوام متحدہ سلامتی کونسل (یواین ایس سی) جائے گا۔

ہندوستان کی پاکستان کوسچائی قبول کرنے کا مشورہ

ہندوستان مسلسل انٹرنیشنل کمیونٹی کویہ بتاتا آرہا ہے کہ دفعہ -370 کے بیشترشقوں کو ختم کرنے کا قدم اس کا داخلی معاملہ ہے۔ ہندوستان کی طرف سے پاکستان کواس سچائی کوقبول کرنے کا مشورہ دیا گیا ہے۔ کسی مسلم ملک کا نام لئے بغیرشاہ محمود قریشی نےکہا 'امہ (اسلامی طبقہ) کے سرپرست بھی اپنے معاشی مفادات کے سبب کشمیرموضوع پرپاکستان کی حمایت نہیں کرسکتے ہیں'۔

شاہ محمود قریشی نےاپنے ملک کے باشندوں کوکشمیرکولےکر کسی طرح کے مغالطے میں نہیں رہنےکوکہا ہے۔ شاہ محمود قریشی نےاپنے ملک کے باشندوں کوکشمیرکولےکر کسی طرح کے مغالطے میں نہیں رہنےکوکہا ہے۔

شاہ محمود قریشی نے کہا کہ دنیا کے مختلف لوگوں کے اپنے اپنے مفاد ہیں۔ ہندوستان ایک ارب سے زیادہ لوگوں کا بازارہے۔ بہت سے لوگوں نے ہندوستان میں سرمایہ کاری کی ہے۔ ہم اکثرامہ اوراسلام کے بارے میں بات کرتے ہیں، لیکن امہ کے سرپرستوں نے بھی ہندوستان میں بڑی سرمایہ کی ہوئی ہے۔ ان کے مفاد ہندوستان کے ساتھ جڑے ہیں۔ روس نے حال ہی میں جموں وکشمیرپرہندوستان کے قدم کی حمایت کی تھی۔ وہ ایسا کرنے والا یواین ایس سی کا پہلا رکن تھا۔ اس نے کہا تھا کہ ریاستوں کے درجہ میں تبدیلی ہندوستانی آئین کے ڈھانچے کے اندرہے۔

Loading...