قوام متحدہ کے انسانی حقوق کے دفتر نے قتل کے مجرم اسرائیلی فوجی کو ملی سزا کو مذاق قرار دیا– News18 Urdu

قوام متحدہ کے انسانی حقوق کے دفتر نے قتل کے مجرم اسرائیلی فوجی کو ملی سزا کو مذاق قرار دیا

اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کے دفتر نے آج کہا کہ ایک زخمی اور نہتے فلسطینی کو قتل کرنے کے لئے اسرائیلی فوجی کو محض 18 ماہ کی سزا دینا ناقابل قبول ہے ۔ یہ سزا ایک مذاق ہے

Feb 24, 2017 08:18 PM IST | Updated on: Feb 24, 2017 08:18 PM IST

جنیوا: اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کے دفتر نے آج کہا کہ ایک زخمی اور نہتے فلسطینی کو قتل کرنے کے لئے اسرائیلی فوجی کو محض 18 ماہ کی سزا دینا ناقابل قبول ہے ۔ یہ سزا ایک مذاق ہے ۔

ا قوام متحدہ انسانی حقوق کی ترجمان روینہ شامداسانی نے جنیوا میں ایک نیوز بریفنگ میں کہا اس طرح تو انصاف کے نظام پر سے اعتبار اٹھ جائے گا ۔ خطرہ پیدا ہوجائے گا اور یہ سمجھا جانے لگے گا کہ کچھ بھی کرکے انسان بچ سکتا ہے۔

قوام متحدہ کے انسانی حقوق کے دفتر نے قتل کے مجرم اسرائیلی فوجی کو ملی سزا کو مذاق قرار دیا

مارچ 2016 میں ایک زخمی اور معذور فلسطینی کو قتل کرنے والے یہودی فوجی کو منگل کے روز محض 18 ماہ کی سزا سنائی گئی ہے جو ضرورت سے زیادہ نرم ہے ، اس سے فلسطینوں میں غم و غصہ پھیل گیا ہے۔ یہ اسرائیل کی تاریخ کا ایک فیصلہ کن مقدمہ تھا۔

Loading...

Loading...