ایرانی صدر حسن روحانی نے ٹرمپ کو لیا آڑے ہاتھوں ، اپنی میزائل سازی کی صلاحیت بڑھانے کا کیا اعلان

Sep 22, 2017 08:52 PM IST | Updated on: Sep 22, 2017 08:53 PM IST

لندن: ایران اپنی میزائل سازی کی صلاحیتوں کو مضبوط بنائے گا اور اس کے لئے کسی ملک سے اجازت طلب نہيں کرے گا۔ یہ اعلان ایرانی صدر حسن روحانی نے آج جمعہ کو امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کے بیان کے جواب میں کیا ۔ ایرانی خبررساں ایجنسی تسنیم کی رپورٹ کے مطابق مسٹر حسن روحانی آج ایک ملٹری پریڈ کی تقریب سے خطاب کررہے تھے، جس میں نمائش کئے لئے پیش گئے ہتھیاروں میں ایک نوتعمیر شدہ بیلسٹک میزائل بھی تھا، جس کی صلاحیت دو ہزار کلومیٹر تک مار کرنے کی ہے۔

تسنیم نیوز ایجنسی نے پاسداران انقلاب کے سربراہ امیر علی حاجی زادہ کے حوالے سے بیلسٹک میزائل کی کچھ دیگر تفصیلات کا بھی ذکر کیا۔ منگل کے روز اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں مسٹر ڈونالڈ ٹرمپ نے کہا تھاکہ ایران اپنی میزائل سازی صلاحیت بڑھانے میں مصروف ہے۔ انہوں نے ایران کو یمن، عراق ، شام اور مشرق وسطی کے دیگر ممالک میں تشدد برپا کرنے کا بھی مورد الزام ٹھہرایا تھا۔ مسٹر ٹرمپ نے 2015 میں ایران کے ساتھ امریکہ اور پانچ دیگر عالمی طاقتوں کے نیوکلیائی معاہدے کی بھی نکتہ چینی کی تھی، جس کے تحت ایران اپنے خلاف معاشی پابندیاں ختم کرنے کے عوض اپنا جوہری پروگرام محدود کرنے پر راضی ہوا تھا۔

ایرانی صدر حسن روحانی نے ٹرمپ کو لیا آڑے ہاتھوں ، اپنی میزائل سازی کی صلاحیت بڑھانے کا کیا اعلان

ٹیلیویژن پر نشر ہونے والے اپنے خطاب میں مسٹر حسن روحانی نے کہا کہ "ہم بے خوف ہوکر اپنی فوجی طاقت بڑھائيں گے اور اس کے لئے ہم اپنی میزائل سازی صلاحیتيں مضبوط کریں گے، جس کے لئے ہم کسی سے اجازت طلب نہيں کریں گے"۔ انہوں نے کہا کہ اس سال اقوام متحدہ کی جنر ل اسمبلی میں امریکہ اور اسرائیل کو چھوڑ کر تمام ممالک نے نیوکلیائی معاہدے کی حمایت کی ہے۔ امریکی وزیر خارجہ ریکس ٹلرسن نے کہا ہے کہ ایران کے ساتھ نیوکلیائی معاہدے میں تبدیلی کرنا ضروری ہے، بصورت ديگر امریکہ اس کا پابند نہيں ہوگا۔ جبکہ ایران کہہ چکا ہے کہ اس کے نیوکلیائی معاہدے پر نظر ثانی کے لئے بات چیت نہیں ہوسکتی ہے۔

چین کی وزير خارجہ وانگ ای نے کہا کہ شمالی کوریا کے ساتھ کشیدگی وجہ سے ایرانی نیوکلیائی معاہدے کی اہمیت بڑھ گئی ہے اور چین اس کی حمایت جاری رکھے گا۔ مسٹر ڈونالڈ ٹرمپ نے امسال فروری میں ہی ایران کو بیلسٹک میزائل کا تجربہ کرنے پر نوٹس دیا تھا اور اپنا میزائل پروگرام جاری رکھنے اور خطے میں اپنی گندی سرگرمیوں کے لئے جولائی میں انہوں نے ایران پر نئی اقتصادی پابندیاں لگا دی تھی۔ روسی وزیر خارجہ سرگئی لاؤروف نے جمعرات کے روز کہا کہ ایران پر یکطرفہ پابندیاں لگانے کی امریکی کارروائی کا جواز نہیں ہے اور اس سے عالمی کوششوں کی اجتماعی روح کمزور ہوتی ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز