ایران نے بیلسٹک میزائل کا کامیاب تجربہ کیا: سرکاری میڈیا

دوبئی۔ ایران نے دو ہزار کلومیٹر طویل مار کرنے والے ایک نئے بیلسٹک میزائل کا تجربہ کیا ہے۔

Sep 23, 2017 05:41 PM IST | Updated on: Sep 23, 2017 05:41 PM IST

دوبئی۔  ایران نے دو ہزار کلومیٹر طویل مار کرنے والے ایک نئے بیلسٹک میزائل کا تجربہ کیا ہے۔ یہ اطلاع سرکاری میڈیا نے دی ہے۔ جمعہ کے روز ایک فوجی پریڈ کے دوران اس کی میزائل کی نمائش بھی کی گئی تھی۔ خرم شہر میزائل کا یہ تجربہ امریکہ کے لئے باعث تشویش ہوسکتا ہے۔ ایران کا کہنا ہے کہ یہ نیا میزائل متعدد حربوں کے ساتھ وار کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔

ایران کے سرکاری ٹیلی ویژن آئی آر آئی پی نے میزائل کی آزمائش کے فوٹیج بھی دکھائے حالانکہ اس نے یہ نہیں بتایا کہ اس کا تجربہ کب اور کہاں کیا۔ ٹیلی ویژن پر فوٹیج دکھاتے ہوئے کہا گیا کہ آپ خرم شہر بیلسٹک میزائل کا کامیاب تجربہ دیکھ رہے ہیں۔ اس میزائل کی مار دو ہزار کلومیٹر ہے اور یہ ہمارے ملک کا جدید ترین میزائل ہے۔ سرکاری میڈیا نے مزید بتایا کہ یہ 2000 کلومیٹر مار کی صلاحیت کا حامل تیسرا میزائل ہے۔ خرم شہر میزائل کی نمائش پہلی بار جمعہ کے روز ایک فوجی پریڈ میں کی گئی جہاں ایرانی صدر حسن روحانی بھی موجود تھے۔ انہوں نے اس موقعہ پر کہا کہ ایران اپنی میزائل سازی کی صلاحیت کو مستحکم کرے گا اور اس کے لئے وہ کسی کی اجازت نہیں لے گا۔

ایران نے بیلسٹک میزائل کا کامیاب تجربہ کیا: سرکاری میڈیا

علامتی تصویر

منگل کے روز اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ نے اپنی تقریر میں کہا تھا کہ ایران اپنی میزائل سازی کی صلاحیتیں بڑھا رہا ہے اور یمن، شام اور مشرق وسطی کے دیگر ملکوں میں تشدد کو ہوا دے رہا ہے۔ ٹرمپ نے 2015 کے اس معاہدہ پر بھی نکتہ چینی کی جو امریکہ اور دیگر مغربی ملکوں نے ایران کے ساتھ کیا تھا جس کے تحت ایران اقتصادی بندشوں سے راحت کے عوض اپنے نیوکلیائی پروگرام کو محدود کرنے پر رضامند ہوگیا تھا۔

امریکہ نے ایران کے خلاف یہ کہتے ہوئے یک طرفہ طور پر پابندیاں عائد کردی ہیں کہ اس کے بیلسٹک میزائیلوں کے تجربے اقوام متحدہ کی اس قرارداد کی خلاف ورزی ہے جس میں نیوکلیائی معاہدہ کی توثیق کی گئی تھی۔ مگر ایران پر نیوکلیائی ہتھیار لے کر جانے والی بیلسٹک میزائلوں کی تیاری سے متعلق سرگرمیوں سے دور رہنے پر زور دیا گیا تھا۔ مگر ایران اس سے انکار کرتا ہے کہ اس کے میزائل سازی پروگرام سے قرارداد کی خلاف ورزی ہوتی ہے۔ اس کا کہنا ہے کہ اس کے میزائل نیوکلیائی ہتھیار لے جانے کے لئے نہیں بنائے گئے ہیں۔

Loading...

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز