پابندی کا سامنا کرنے والی ایران کی نامور شطرنج کی کھلاڑی اب امریکہ کے لئے کھیلے گی

Oct 06, 2017 07:55 PM IST | Updated on: Oct 06, 2017 07:55 PM IST

نیو یارک ۔  ایران کی ایک  نامور شطرنج کی کھلاڑی، جسے ہیڈ اسکارف نہ پہننے پر اپنے ملک میں پابندی کا سامنا تھا، اب امریکا کے لیے شطرنج کھیلیں گی۔ تھامسن روئٹرز فاؤنڈیشن کی رپورٹ کے مطابق انیس سالہ ڈوسرا درخشانی پر ’ایرانی چیس فیڈریشن‘ نے اس لیے پابندی عائد کر دی تھی کیوں کہ اس سال جنوری میں ڈوسرا نے ’جبرالٹر‘ نامی شطرنج کے مقابلے میں اپنا سر نہیں ڈھانپا تھا۔

اس واقعے کے بعد سے یہ نوجوان لڑکی اب امریکا میں رہائش پذیر ہے، جہاں وہ سینٹ لوئس یونیورسٹی کی طالبہ ہے اور اس تعلیمی ادارے کی شطرنج کی ٹیم کا حصہ بھی ہے۔ امریکی چیس فیڈریشن کی ویب سائٹ پر شائع ہونے والی تفصیلات کے مطابق اب ڈوسرا سرکاری طور پر امریکا میں چیس کی کھلاڑی بن گئی ہیں۔

پابندی کا سامنا کرنے والی ایران کی نامور شطرنج کی کھلاڑی اب امریکہ کے لئے کھیلے گی

اس واقعے کے بعد سے یہ نوجوان لڑکی اب امریکا میں رہائش پذیر ہے، جہاں وہ سینٹ لوئس یونیورسٹی کی طالبہ ہے اور اس تعلیمی ادارے کی شطرنج کی ٹیم کا حصہ بھی ہے۔: تصویر، ٹوئیٹر۔

ایران میں 1979ء کے بعد سے یہ قانون نافذ ہے کہ خواتین ’مہذب‘ لباس پہنیں گی۔ ضابطہٴ لباس کے مطابق خواتین کے سَر مکمل طور پر ڈھکے ہونے چاہئں، پتلون یا شلوار لمبی ہونی چاہیے اور ممکن ہو تو ملبوسات کے رنگ گہرے اور سیاہ ہونے چاہئیں ۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز