عراق نے موصل شہر کو واپس حاصل کرنے کے لئے کارروائی شروع کی

Jun 19, 2017 11:30 AM IST | Updated on: Jun 19, 2017 11:30 AM IST

موصل۔  عراق میں فوج نے شدت پسند تنظیم داعش کے مقبوضہ پرانے موصل شہر کو واپس حاصل کرنے کے لئے اس کے خلاف کارروائی شروع کر دی ہے۔ موصل شہر داعش کے قبضے والا آخری شہر ہے اور یہ گزشتہ آٹھ ماہ سے اس کے قبضے میں ہے۔ امریکی فوجی افسر بیٹ میکرک نے کہا، "عراقی فوج نے آج صبح ہی پرانے موصل شہر میں حملے شروع کر دیے ہیں ۔ یہ داعش کا آخری شہر ہے۔ ہمیں فوج پر فخر ہے۔ " موصل کے لئے اکتوبر 2016 میں جنگ شروع ہوئی تھی تب سے اب تک عراقی فوج 300 سے بھی زیادہ داعش شدت پسندوں کو ہلاک کرچکی ہے۔

اقوام متحدہ کا کہنا ہے کہ موصل کے مغربی حصے میں گزشتہ دو ہفتوں میں 230 شہری مارے جا چکے ہیں۔ امریکی قیادت والی اتحادی افواج گزشتہ آٹھ ماہ سے عراق کے دوسرے شہر موصل کو داعش کے قبضہ سے آزاد کرانے کی کوشش کر رہی ہے۔ عراقی فوج اس شہر کے مشرقی حصے پر گزشتہ اکتوبر ماہ میں ہی کنٹرول حاصل کر چکی ہے۔ حال ہی میں اس علاقے سے فرار ہونے میں کامیاب ہوئے لوگوں کا کہنا ہے کہ پرانے موصل میں حالات انتہائی خراب ہیں اور سینکڑوں لوگ غذائی اشیا سےمحروم ہیں۔ سیکورٹی فورسز نے آہستہ آہستہ موصل شہر کا محاصرہ شروع کر دیا ہے۔ حکام کا کہنا ہے کہ جنگ ابھی جاری رہے گی کیونکہ موصل اور شامی سر حد تک کے علاقے کو محفوظ بنانا ہے۔ بغداد اور موصل کے درمیان حویجہ قصبہ اب بھی داعش کے قبضے میں ہے۔ داعش نے 2014 میں موصل پر قبضہ کرنے کے بعد اس علاقے کو خلافت قرار دے دیا تھا۔

عراق نے موصل شہر کو واپس حاصل کرنے کے لئے کارروائی شروع کی

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز