داعش کے قبضے سے آزاد کرایا گیا قدیم شہر الحضر

Apr 27, 2017 03:51 PM IST | Updated on: Apr 27, 2017 03:51 PM IST

بغداد۔  عراق کے نیم فوجی دستوں کی اکائیوں نے قدیم شہر الحضر کو داعش کے قبضے سے آزاد کرا لیا ہے۔ عراقی فوج کے ترجمان کے مطابق نیم فوجی دستوں نے داعش کے شدت پسندوں کو قدیم شہر سے باہر کرتے ہوئے شہر پر قبضہ کر لیا۔ داعش نے اپنے تین سال کے قبضے کے دوران شہر کو بہت نقصان پہنچایا ہے۔ تاہم، اس دوران نقصان کتنا ہوا ہے اس کے بارے میں تفصیلات نہیں مل سکی ہیں۔

واضح ر ہے کہ داعش نے 2015 میں ایک ویڈیو جاری کیا تھا جس میں الحضر کی یادگاروں کو نقصان پہنچاتے ہوئے دکھایا گیا تھا۔ ایران میں تربیت یافتہ شیعہ قیادت والے جنگجوؤں نے منگل کی صبح الحضر کو آزاد کرانے کے لئے اپنی مہم شروع کی تھی ۔ اس شیعہ جنگجو گروپ کا قیام 2014 میں داعش کے قیام کے بعد عمل میں آیا تھا۔

داعش کے قبضے سے آزاد کرایا گیا قدیم شہر الحضر

عراقی سیکورٹی فورسیز عراق میں ایک فوجی گاڑی میں بیٹھے ہوئے: علامتی تصویر

الحضر 2014 میں داعش کے کنٹرول میں آنے سے پہلے عراق کے سب سے محفوظ قدیم مقام میں سے ایک تھا۔ دارالحکومت بغداد سے 290 کلومیٹر شمال مغرب اور موصل سے 110 کلومیٹر جنوب مغرب میں واقع الحضر غالبا دسری تیسری صدی قبل مسیح میں آباد کیا گیا تھا۔ شہر کے کئی مندر یونانی اور رومن فن تعمیر کا نمونہ پیش کرتے تھے اور ان میں مشرقی آرائشی کی خصوصیات بھی ملتی تھیں۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز