برطانیہ میں مسلمانوں پر حملے میں 500 گنا اضافہ

Jun 23, 2017 12:01 AM IST | Updated on: Jun 23, 2017 12:01 AM IST

مانچسٹر : گزشتہ ماہ کنسرٹ پر دہشت گردانہ حملے کے بعد گریٹر مانچسٹر میں مسلمانوں کے خلاف حملوں میں 500 فیصد سے زیادہ اضافہ ہوا ہے۔ سرکاری اعداد و شمار کے مطابق سال 2016 میں اسی مدت میں 37 کے مقابلہ میں مسلم مخالف نفرت پر مبنی جرائم کی 224 رپورٹیں تھیں۔

گریٹر مانچسٹر پولیس نے اسلاموفوبیا سے وابستہ واقعات میں 505 فیصد اضافہ کا انکشاف کیا۔ اعدادوشمار کے مطابق پیر کے ابتدائی گھنٹے میں پھنسبرپارک کی مسجد پر حملے کے بعد برطانیہ بھر میں پولیس نے مسلمانوں کی سیکورٹی میں اضافہ کردیا ہے۔

برطانیہ میں مسلمانوں پر حملے میں 500 گنا اضافہ

mosque file photo

ایک پولیس اہلکار روب پٹس کے مطابق حالیہ دنوں میں اس علاقہ میں نفرت پر مبنی جرائم معمول کی سطح پر واپس آئے تھے، انہوں نے کہا کہ گریٹر مانچسٹر کی آبادی میں مختلف مذاہب اور پس منظر کے لوگ ساتھ رہتے ہیں ، جس پر ہمیں فخر ہے، ہم کسی بھی قسم کی نفرت یا تعصب کو برداشت نہیں کریں گے،

پولیس کی طرف سے جاری اعداد و شمار سمیت مذہبی منافرت پر منبی جرائم میں 22 لوگوں کی موت ہو گئی ہے اور 220 دیگر زخمی ہو گئے ، لیکن سب سے زیادہ اضافہ مسلم مخالف جرائم میں ہوا ہے ۔ لڑکیوں کے لئے مانچسٹر اسلامک ہائی اسکول میں 14 سالہ ایک طالبہ کو بھی حملے کے دن کے بعد نشانہ بنایا گیا۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز