اسرائیلی نرس نے فلسطینی بچے کو پلایا دودھ ، پوری دنیا ہے حیران

Jun 11, 2017 08:42 PM IST | Updated on: Jun 11, 2017 08:42 PM IST

اسرائیلی نرس نے فلسطینی بچے کو پلایا دودھ ، پوری دنیا ہے حیران

 پوری دنیا جانتی ہے کہ اسرائیل اور فلسطین کے درمیان کس حد تک دشمنی ہے ۔ اسرائیل کی غاصبانہ پالیسی کے خلاف فلسطینی برسرپیکار ہیں ۔  لیکن اس مرتبہ ایک ایسا معاملہ سامنے آیا ہے، جسے جان کر لوگ حیرت میں ہیں ۔ دراصل ان دنوں سوشل میڈیا پر کچھ تصاویر اور ایک ویڈیو وائرل ہو رہا ہے، جس میں اسرائیل کی ایک نرس فلسطینی خاتون کی کوکھ سے پیدا نوزائیدہ بچے دودھ پلا رہی ہے۔ انسانیت کی مثال پیش کرتی یہ تصویر دنیا بھر میں موضوع بحث بنی ہوئی ہے، جس کسی کی بھی اس پر نظر پڑ رہی ہے وہ حیرانی کے اظہار کے ساتھ یہ بھی لکھ رہا ہے کہ 'دنیا میں انسانیت سے بڑھ کر کچھ بھی نہیں ہے، ہمیشہ اس کی جیت ہوتی ہے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق سڑک حادثہ میں ایک فلسطینی خاتون بری طریقی سے زخمی ہو گئی تھی اور اس کے شوہر کی موت ہو گئی تھی۔ خاتون کو اسرائیل کے کریم اسپتال میں داخل کرایا ہے۔ اس کے بچے کو بھوک کے مارے روتا ہوا دیکھ کر اسرائیلی نرس کا کلیجہ پسیج گیا اور اس نے بچے کو گود میں اٹھایا اور دودھ پلانے لگی۔ انسانیت کی مثال پیش کرنے والی یہودی نرس کا نام اولا اوسٹرووسكي جك ہے۔

بتایا جاتا ہے کہ اسرائیلی نرس نے پہلے تقریبا سات گھنٹے تک بچے کو بوتل سے دودھ پلانے کی کوشش کی، لیکن اس نے رونا بند نہیں کیا۔ اس کے بعد اس نے دودھ پلانے کا فیصلہ کیا۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز