اسرائیلی سیکورٹی دستوں کا فلسطینی حملہ آور کے گھر پر حملہ، بھائی گرفتار

Jul 22, 2017 08:05 PM IST | Updated on: Jul 22, 2017 08:06 PM IST

یروشلم۔  اسرائیلی فوجیوں نے آج اس فلسطینی نوجوان کے گھر پر حملہ کیا جس نے تین اسرائیلیوں کو چھرا مارکر ہلاک کردیا تھا۔ فوج نے مغربی کنارہ پر واقع اس کے گاؤں میں فلسطینیوں کی نقل و حرکت پر پابندی لگا دی ہے۔ یہ اطلاع فوج نے دی۔ اسرائیلی فوج کی ایک خاتون ترجمان نے بتایا کہ سیکورٹی دستوں نے خوبار گاؤں میں حملہ آور کے گھر کا جائزہ لیا اور ہتھیاروں کے لئے تلاشی لی ساتھ ہی کچھ رقوم ضبط کرلیں جو دہشت گردانہ کارروائیوں میں استعمال ہوسکتی تھیں۔ اس کے علاوہ حملہ آور کے بھائی کو بھی حراست میں لے لیا گیا۔ کئی برسوں کے بدترین تشدد میں کل 6 افراد ہلاک ہوگئے تھے۔

واضح رہے کہ اسرائیل کے زیر قبضہ مغربی کنارہ کی ایک بستی میں تین اسرائیلی شہریوں کو چاقو مارکر ہلاک کردیا گیا تھا جب کہ اس واقعہ سے چند گھنٹوں پہلے مسجد اقصی کے قریب میٹل ڈٹیکٹر نصب کئے جانے پر شروع ہوئے تشدد کے دوران تین فلسطینی مارے گئے تھے۔ اس دوران صدر محمود عباس نے حکم جاری کیا ہے کہ جب تک الاقصی کے قریب لگائے گئے یہ میٹل ڈٹیکٹر ہٹائے نہیں جاتے اسرائیل کے ساتھ تمام سرکاری روابط معطل رہیں گے۔ انہوں نے مزید تفصیلات نہیں بتائیں مگر اس وقت فریقین کے دوران روابط صرف سیکورٹی امور میں تعاون تک محدود ہیں۔

اسرائیلی سیکورٹی دستوں کا فلسطینی حملہ آور کے گھر پر حملہ، بھائی گرفتار

تصویر: العربیہ ڈاٹ نیٹ، فائل فوٹو

جن تین اسرائیلیوں کو چاقو مارکرقتل کیا گیا،وہ مغربی کنارہ کی بستی نیوتسف سے تعلق رکھتے تھے۔ اس حملے میں ایک شخص زخمی بھی ہوا ۔ حملہ آور کی شناخت 20 سالہ عمر العبد کے طور پر کی گئی ہے جسے گولی مارکر زخمی کردیا گیا اور اب زیر علاج ہے۔

العبد نے اس حملہ سے پہلے فیس بک پر ایک پیغام میں کہا تھا کہ میں وہاں جا رہا ہوں اور مجھے معلوم ہے کہ میں یہاں واپس نہیں آؤں گا۔ میں جنت میں جارہا ہوں، خدا، رسول اور مسجد الاقصی کے لئے یہ کتنی حسین موت ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز