یروشلم تنازع : امریکہ کو یکطرفہ فیصلہ کا حق نہیں ، قرارداد عالمی برادری کی جانب سے واضح  پیغام : سعودی عرب

Dec 22, 2017 01:27 PM IST | Updated on: Dec 22, 2017 01:28 PM IST

نیویارک : اقوام متحدہ میں سعودی عرب کے سفیر عبداللہ معلمی نے یروشلم کو اسرائیلی دارالحکومت تسلیم کرنے کے امریکی فیصلہ کے خلاف جنرل اسمبلی میں قرارداد منظور ہونے کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہا کہ امریکہ کو ایسا فیصلہ کرنے کا کوئی حق حاصل نہیں ہے۔ انھوں نے مزید کہا کہ جنرل اسمبلی نے اس قرارداد پر بڑے پیمانے پر ووٹ ڈال کر امریکہ پر اپنا واضح نکتہ نظر ظاہر کردیا ہے۔

بی بی سی کی رپورٹ کے مطابق سعودی سفیر کا کہنا تھا کہ عالمی برادری نے امریکہ کو واضح پیغام دیدیا ہے کہ وہ ایسے یکطرفہ طور پر فیصلے نہیں کر سکتا۔ عبداللہ معلمی کے مطابق قرارداد کے حق میں ووٹ ڈالنے والے ممالک کے خلاف امریکی صدر ٹرمپ کی دھمکی کہ وہ ان ممالک کی امداد بند کر دیں گے، غلط تھی۔

یروشلم تنازع : امریکہ کو یکطرفہ فیصلہ کا حق نہیں ، قرارداد عالمی برادری کی جانب سے واضح  پیغام : سعودی عرب

خیال رہے کہ ووٹنگ سے پہلے امریکی صدر نے دھمکی دی تھی کہ اس کے فیصلہ کے خلاف پیش کی جانے والی قرارداد کی حمایت کرنے والے ممالک کی مالی امداد روک لی جائے گی۔ٹرمپ کا کہنا تھا کہ ہم سے لاکھوں ڈالر اور یہاں تک کہ اربوں ڈالر لیتے ہیں اور اس کے بعد بھی ہمارے خلاف ووٹ دیتے ہیں، ہم اس ووٹنگ کو دیکھ رہے ہیں، اگر ہمارے خلاف ووٹ دیا گیا تو اس کی کوئی پروا نہیں ہم بہت سے پیسے بچا لیں گے۔

قابل ذکر ہے کہ گزشتہ روز اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں مقبوضہ بیت المقدس کو اسرائیلی دارالحکومت تسلیم کیے جانے کے امریکی فیصلہ کے خلاف قرارداد بھاری اکثریت سے منظور کر لی گئی۔ اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس میںترکی اور یمن کی جانب سے پیش کی جانے والی قرارداد کے حق میںہندوستان سمیت 128 ممالک نے ووٹ ڈالے جب کہ محض 9 ممالک ہی امریکہ کے ساتھ کھڑا نظر آیا اور 35 ممالک نے ووٹنگ میں حصہ نہیں لیا۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز