کرد لڑاکوں کا کرکک چھوڑنے سے انکار

بغداد۔ کر د لڑاکوں نے عراق میں تیل سے مالا مال شہر کرکک سے ہٹنے سے انکار کردیا ہے،کرد وں کے ایک سیکورٹی افسر نے بتایا کہ کرد پیش مرگہ عراقی فوجی جوانوں سے نہیں ڈریں گے۔

Oct 15, 2017 04:16 PM IST | Updated on: Oct 15, 2017 04:16 PM IST

بغداد۔ کر د لڑاکوں نے عراق میں تیل سے مالا مال شہر کرکک سے ہٹنے سے انکار کردیا ہے،کرد وں کے ایک سیکورٹی افسر نے بتایا کہ کرد پیش مرگہ عراقی فوجی جوانوں سے نہیں ڈریں گے۔ کردستا ن ریجنل گورنمنٹ(کے آر جی)سیکورٹی کونسل کے ایک افسر نے کل بتایا کہ ایرانی تربیت یافتہ شیعہ گروپ نے مقبط خالد جنکشن کے شمالی حصہ کو چھوڑنے کیلئے دیر رات تک کا وقت دیا ہے۔

افسر نے بتایا کہ یہاں سے کرکک کے علاقہ میں واقع ہوائی پٹی اور کچھ تیل علاقوں پر کنٹرول کیاجاتا ہے۔ یہ شہر اور قرب وجوار کے علاقے موجودہ وقت میں کردوں کے کنٹرول میں ہے۔ کرد افسر نے ہفتہ کے روز کہا تھا کہ عراقی خطروں کا سامنا کرنے کیلئے ہزاروں فوجیوں کو کرکک بھیج دیا گیا ہے۔ دوسری جانب عراق کے وزیر اعظم حیدرالعبادی نے کردوں پر حملہ کرنے کی کسی بھی منصوبہ سے انکار کیا ہے۔ عراقی نیم فوجی دستوں کے انتباہ اور کردوں کے ذریعہ کرکک چھوڑنے سے انکار کرنے کے بعد اب تک اس علاقہ میں جھڑپوں کی کوئی اطلاع نہیں ملی ہے،لیکن ایک رہائشی نے بتایا کہ درجنوں کرد نوجوان مشین گنوں کے ساتھ کرکک کے آس پاس تعینات ہیں ۔

کرد لڑاکوں کا کرکک چھوڑنے سے انکار

پیش مرگہ عراقی فوجی: فائل فوٹو، العربیہ

شمالی عراق میں کردوں کی آزادی کیلئے گزشتہ مہینے ہونے والے استصواب رائے کے بعد سے کے آرجی اور شیعوں کی قیادت والی عراقی حکومت کے مابین کشیدگی ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز