آسام اسمبلی کو ’بھگوا رنگ ‘ میں رنگنے پر کانگریس کا ٹی پارٹی اور فوٹو سیشن کا بائیکاٹ– News18 Urdu

آسام اسمبلی کو ’بھگوا رنگ ‘ میں رنگنے پر کانگریس کا ٹی پارٹی اور فوٹو سیشن کا بائیکاٹ

گواہاٹی۔ آسام اسمبلی کا بجٹ اجلاس آج احتجاجی شور و غل کے درمیان شروع ہوا جس میں سب سے بڑی اپوزیشن پارٹی کانگریس نے اسمبلی کے احاطے کو ’بھگوا رنگ‘ دینے پر اعتراض کیا۔

Feb 06, 2018 03:57 PM IST | Updated on: Feb 06, 2018 03:57 PM IST

گواہاٹی۔ آسام اسمبلی کا بجٹ اجلاس آج احتجاجی شور و غل کے درمیان شروع ہوا جس میں سب سے بڑی اپوزیشن پارٹی کانگریس نے اسمبلی کے احاطے کو ’بھگوا رنگ‘ دینے پر اعتراض کیا۔ کانگریس کے اسمبلی ارکان نے گورنر کے اعزاز میں چائے کی دعوت میں بھی شرکت نہیں کی اور تصویر کھنچوانے کے اُس پروگرام کا بھی بائیکاٹ کیا جس میں اراکین کی شرکت لازمی ہے۔ اسی پر اکتفا نہیں کیا گیا گورنر جگدیش مکھی کے خطبے میں اس قدر خلل ڈالا گیا کہ اُنہیں پانچ منٹ میں اپنا خطبہ ختم کرنا پڑا۔

گورنر کے خطبے کو ابھی پانچ منٹ ہی گزرا تھا کہ کانگریس نےخطبے کا وہ حصہ سنتے ہی احتجاج شروع کر دیا جس میں کہا گیا تھا کہ حکومت صاف ستھری انتظامیہ فراہم کرنے کی پابند ہے۔ یہ الزام لگاتے ہوئے کہ بی جے پی کی قیادت والی حکومت نے اپنے وعدوں کا پاس نہیں رکھا اپوزیشن پارٹی کے اراکین نےحکومت کے خلاف ’شرم کرو،شرم کرو‘ کا نعرہ لگانا شروع کر دیا۔ ان لوگوں نے حکومت کے خلاف تختیاں بھی اٹھا رکھی تھیں۔ احتجاج کرتے ہوئے کانگریس کے اراکین ایوان کے بیچوں بیچ پہنچ گئے تھے۔ خلل کی وجہ سے تقریر جاری رکھنا ناممکن پا کر گورنر نے درمیانی صفحات چھوڑ کر آخری صفحہ پڑھنے کو ترجیح  دی۔

آسام اسمبلی کو ’بھگوا رنگ ‘ میں رنگنے پر کانگریس کا ٹی پارٹی اور فوٹو سیشن کا بائیکاٹ

آسام کے سابق کانگریسی وزیر اعلیٰ ترون گگوئی: فائل فوٹو۔

تقریر ختم ہونے پر اسپیکر ہیتندر ناتھ گوسوامی نے تمام موجود اراکین سے حسب روایت گورنر کے اعزاز میں چائے کی دعوت میں شرکت کی استدعا کی ۔ کانگریس کے عبد الخالق نے اسپیکر کی بات ختم ہوتے ہی الزام لگایا کہ چائے کی دعوت اور تصویر کھنچوانے کے پروگرام کی سجاوٹ کو چونکہ ایک مخصوص سیاسی پارٹی کے بھگوا رنگ میں رنگ دیا گیا ہے اس لئے احتجاجاً کانگریس نے دونوں پروگراموں کا بائیکاٹ کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔