ارونگ آباد تیزاب سانحہ : آخر کار زندگی کی جنگ ہارگئی سلمی ، بھائی کے پاس نہیں ہے لاش کو گاؤں لے جانے کیلئے پیسہ– News18 Urdu

ارونگ آباد تیزاب سانحہ : آخر کار زندگی کی جنگ ہارگئی سلمی ، بھائی کے پاس نہیں ہے لاش کو گاؤں لے جانے کیلئے پیسہ

بہار کے اورنگ آباد میں دردناک تیزاب حملہ کا شکار سلمی نامی لڑکی تین ماہ تک لڑنے کے بعد آخر کا ر جمعہ کو زندگی کی جنگ ہارگئی اور اس نے اپولو اسپتال میں دم توڑ دیا ۔

Sep 16, 2016 07:17 PM IST | Updated on: Sep 16, 2016 07:35 PM IST

اورنگ آباد : بہار کے اورنگ آباد میں دردناک تیزاب حملہ کا شکار سلمی نامی لڑکی تین ماہ تک لڑنے کے بعد آخر کا ر جمعہ کو زندگی کی جنگ ہارگئی اور اس نے اپولو اسپتال میں دم توڑ دیا ۔ اب حالت یہ ہے کہ اب اس کے گھر والوں کے پاس سلمی کی لاش گھر لے جانے کیلئے پیسے تک نہیں ہیں ۔

سلمی کے بھائی منظر کے مطابق اپولو اسپتال کی کاغذی کارروائی میں جمعہ کا پورا دن نکل گیا، جس کی وجہ سے اس کی بہن کی لاش کا پوسٹ مارٹم نہیں ہو سکا ۔ اب وہ پوسٹ مارٹم کے لئے ہفتہ کو اسے لے کر ایمس جائے گا۔ اس کے بعد بہار بھون کے سامنے مظاہرہ کرے گا ۔ منظر کو امید ہے کہ حکومت بہن کے زندہ رہنے دوران تو نہیں سنی ، مگر شاید اب اس کے مرنے کے بعد اس کی سن لے ۔

ارونگ آباد تیزاب سانحہ : آخر کار زندگی کی جنگ ہارگئی سلمی ، بھائی کے پاس نہیں ہے لاش کو گاؤں لے جانے کیلئے پیسہ

خیال رہے کہ گزشتہ تین ماہ سے منظر نے ہر طریقہ سے سیاسی لیڈر اور انتظامیہ سے بات کرنے کی کوشش کی، لیکن کچھ نہیں ہوا ۔ منظر نے کہا کہ اس نے بہار کے وزیر اعلی نتیش کمار کے نام اوپن لیٹر بھی لکھا تھا، تب بھی کچھ نہیں ہوا۔

قابل ذکر کہ اورنگ آباد کے راجانگر محلہ کی رہنے والی سلمی کو ایک اظہر نامی لڑکا کافی دنوں سے پریشان کر رہا تھا۔ 3 جون کو ٹیوشن جاتے وقت اظہر نام کے لڑکے نے متاثرہ لڑکی کا ہاتھ پکڑ لیا۔ ٹیوشن سے لوٹ کر طالبہ نے اس کی اطلاع اپنے اہل خانہ کو دی۔

بعدازاں اہل خانہ نے اس کی شکایت اظہر کے گھر والوں سے کی۔ شکایت سننے کے بعد اظہر کے لواحقین اس پر کسی طرح کی کارروائی کرنے کی بجائے متاثرہ کے گھر پر آگئے اور اس کے اہل خانہ سے مار پیٹ کرنے لگے ۔ تاہم دونوں خاندانوں میں کشیدگی بڑھنے کے بعد آس پڑوس کے لوگوں نے درمیان میں آکر معاملہ کو ٹھنڈا کیا۔

مگر یہ معاملہ نہیں پر ختم ہوا ، بلکہ 24 جون کو جب لڑکی اپنے گھر میں باہر والے کمرے میں سو رہی تھی ، تو اس کے گھر میں گھس کر اس پر تیزاب ڈال دیا گیا ۔ لڑکی کو تشویشناک حالت میں اسپتال میں داخل کرایا گیا اور پھر وہ تین ماہ تک زندگی اور موت کی جنگ لڑتی رہی اور بالاخر وہ زندگی کی جنگ ہارگئی ۔

Loading...