جودھپورہائی کورٹ نےنہیں دی نابالغ کو اسقاط حمل کی اجازت، 26 ہفتےکا ہےحمل، یہ رہی وجہ– News18 Urdu

جودھپورہائی کورٹ نےنہیں دی نابالغ کو اسقاط حمل کی اجازت، 26 ہفتےکا ہےحمل، یہ رہی وجہ

عدالت نے اسقاط حمل معاملے میں متاثرہ لڑکی کی میڈیکل رپورٹ کی بنیاد پراجازت دینے سے انکارکردیا۔

May 27, 2019 05:10 PM IST | Updated on: May 27, 2019 05:59 PM IST

جودھپورہائی کورٹ نے 16 سالہ نابالغ لڑکی کواسقاط حمل کرانے کی اجازت دینے سے انکارکردیا ہے۔ نابالغ نے عدالت سے 26 ہفتہ کے حمل کوگرانےکا مطالبہ کرتے ہوئے اس سے متعلق درخواست داخل کی تھی۔ اس کے بعد عدالت نےاس معاملےمیں متاثرہ کی میڈیکل رپورٹ کی بنیاد پراجازت دینے سےانکارکردیا۔ دودن قبل ہفتہ کواس سےمتعلق عدالت کے سامنے درخواست دی گئی تھی۔

نابالغ لڑکی کی پیٹ میں 26 ہفتہ کا حمل ہونے کی وجہ سے عدالت نےایم ڈی ایم اسپتال کے تین خواتین امراض کے ماہرین (گائنولوجسٹ) کےمیڈیکل بورڈ کوجانچ کرکے رپورٹ پیش کرنے کا حکم دیا تھا۔ پیرکومیڈیکل بورڈ نےجانچ کرکےاپنی رپورٹ پیش کردی۔ رپورٹ میں کہا گیا ہےکہ اس اسٹیج پراسقاط حمل کی اجازت نہیں دی جائے۔ اس پرعدالت نےاسقاط حمل کی اجازت دینے سےانکارکردیا۔ اس کےساتھ ہی عدالت نے بلاڑا ایس ایچ اوکوذمہ داری دیتے ہوئےکہا کہ اب اگراسقاط حمل کرایا جاتا ہے تومجرمانہ معاملہ درج کیا جائے۔

جودھپورہائی کورٹ نےنہیں دی نابالغ کو اسقاط حمل کی اجازت، 26 ہفتےکا ہےحمل، یہ رہی وجہ

علامتی تصویر

Loading...

تقریباً 26 ہفتے کا ہے حمل

قابل ذکرہےکہ اس سے متعلق قانون کے مطابق عرضی  داخل کرکے پولیس نے گزشتہ دنوں نابالغ کوعدالت کے سامنے پیش کیا تھا۔ اس کےبعد اسےگرلزشیلٹرہوم (بالیکا گرہ) میں بھیج دیا گیا۔ جمعہ کونابالغ کی طرف سے ایک درخواست پیش کرکے اپیل کی گئی کہ اسے اسقاط حمل کرانے کی اجازت دی جانی چاہئے۔ عدالت نے دستیاب ریکارڈ کی بنیاد پرپایا کہ نابالغ کا حمل تقریباً 26 ہفتے کا ہے۔

میڈیکل بورڈ سے کرائی تھی جانچ 

اس معاملے پرعدالت نے حکم دیا تھا کہ ایم ڈی ایم اسپتال خواتین امراض کےماہرین کی تین رکنی میڈیکل بورڈ سے نابالغ لڑکی کی مکمل میڈیکل جانچ کرائی جائے۔ عدالت نے اس کے ساتھ ہی میڈیکل بورڈ کومیڈیکل ٹرمنیشن آف پریگننسی ایکٹ کےتحت مشورہ کےساتھ رپورٹ دینےکوکہا تھا۔

Loading...