حلال سرمایہ کاری کے نام پر آئی ایم اے کمپنی کی دھوکہ دہی کیس میں معروف عالم دین مولانا حنیف افسرعزیزی گرفتار

ایس آئی ٹی نے کہاہے کہ مولانا حنیف افسرعزیزی نےعوام کو آئی ایم اے کمپنی کی جانب راغب کیا۔ مولانا کی بات مان کر ہزاروں افراد نے آئی ایم اے کمپنی میں اپنا پیسہ لگایا ۔

Jul 12, 2019 07:36 PM IST | Updated on: Jul 12, 2019 07:36 PM IST
حلال سرمایہ کاری کے نام پر آئی ایم اے کمپنی کی دھوکہ دہی کیس میں معروف عالم دین مولانا حنیف افسرعزیزی گرفتار

مولانا حنیف افسر عزیزی

حلال سرمایہ کاری کے نام پر آئی ایم اے کمپنی کی دھوکہ دہی کے بعد ایک جانب ہزاروں خاندان پریشان ہیں اورانصاف کے منتظرہیں تو وہیں دوسری طرف اہم شخصیات کی گرفتاریوں کا سلسلہ جاری ہے۔ آئی ایم اے کمپنی کی دھوکہ دہی کے معاملے ایس آئی ٹی نے کئی اہم افراد کو گرفتار کیاہے۔ شہر کے معروف عالم دین مولانا حنیف افسرعزیزی کو بھی پولیس نے گرفتار کیاہے۔

معاملے کی جانچ کررہی ہے ایس آئی ٹی نے ریاست کے معروف عالم دین مولانا حنیف افسر عزیزی کو گرفتار کیاہے۔ مولانا حنیف افسر عزیزی مسجد بیوپاریاں کے خطیب وامام ہیں۔ ایس آئی ٹی  کے مطابق سال 2017 میں مولانا حنیف افسر عزیزی کو آئی ایم اے کمپنی سے تقریبا تین کروڑروپئے کی مالیت کا ایک گھر تحفہ میں ملا تھا ۔ بنگلورو کے ایچ بی آر لے آؤٹ میں یہ مکان موجود ہے۔

Loading...

ایس آئی ٹی نے کہاہے کہ مولانا حنیف افسرعزیزی نےعوام کو آئی ایم اے کمپنی کی جانب راغب کیا۔ مولانا کی بات مان کر ہزاروں افراد نے آئی ایم اے کمپنی میں اپنا پیسہ لگایا۔  خصوصی پولیس ٹیم نے کہاہے کہ مولانا حنیف افسرعزیزی نے عوام کے مذہبی جذبات کا غلط فائدہ اٹھاتے ہوئے معصوم لوگوں کو آئی ایم اے کمپنی میں پیسہ لگوانے کی ترغیب دی اور اُنہیں گمراہ کیا۔ ایس آئی ٹی نے کہاہے کہ اس سلسلے میں تحقیقات تیزی کے ساتھ جاری ہیں۔

واضح رہے کہ آئی ایم اے دھوکہ دہی معاملے میں پولیس نے بنگلورونارتھ کے ڈپٹی کمشنر وجئے شنکر، اسسٹنٹ کمشنر ناگراج، بی بی ایم پی کے نامزد کارپوریٹر مجاہد سمیت اب تک   18افراد کو گرفتار کیاہے۔ اس معاملے میں مزید گرفتاریوں کا امکان ہے۔

Loading...