نریندرمودی کواین ڈی اے اتحاد نےاتفاق رائے سے منتخب کیا قانون ساز پارٹی کا لیڈر– News18 Urdu

نریندرمودی کواین ڈی اے اتحاد نےاتفاق رائے سے منتخب کیا قانون ساز پارٹی کا لیڈر

بی جے پی کی اتحادی جماعتوں کی میٹنگ میں اتفاق رائے سے نریندرمودی کا نام پیش کیا گیا، جسے منظورکرلیا گیا۔ 

May 25, 2019 04:57 PM IST | Updated on: May 25, 2019 06:34 PM IST

لوک سبھا الیکشن میں ملی جیت کے بعد قومی جمہوری اتحاد (این ڈی اے) کے نومنتخب اراکین پارلیمنٹ نے ہفتہ کو رسمی طورپرنریندرمودی کو اپنا لیڈرمنتخب کرلیا۔ این ڈی اے کے فاتح اراکین پارلیمنٹ اس وقت پارلیمنٹ کے سینٹرل ہال میں میٹنگ کررہے ہیں۔ اس موقع پرپنجاب کے سابق وزیراعلیٰ پرکاش سنگھ بادل نے تجویز پیش کی، جس کی نتیش کماراور رام ولاس پاسوان سمیت این ڈی اے کے تمام اراکین پارلیمنٹ نے حمایت کی۔ اس سے پہلے ہفتہ کوبی جے پی سمیت این ڈی اے کے منتخب اراکین پارلیمنٹ دہلی پہنچے تھے۔

میٹنگ کے بعد نریندرمودی این ڈی اے کی اتحادی جماعتوں کے ساتھ بھی بات چیت کریں گے۔ شیو سینا سربراہ ادھو ٹھاکرے، ایل جے پی سربراہ رام ولاس پاسوان سمیت این ڈی اے کے تمام لیڈر آج دہلی پہنچ رہے ہیں۔ لوک سبھا الیکشن 2019 میں ملی زبردست جیت کے بعد جمعہ کی شام نریندرمودی نے وزیراعظم عہدے سے استعفیٰ دے دیا ہے۔

نریندرمودی کواین ڈی اے اتحاد نےاتفاق رائے سے منتخب کیا قانون ساز پارٹی کا لیڈر

نریندرمودی کواین ڈی اے نےقانون ساز پارٹی کا لیڈرمنتخب کیا۔

Loading...

ان کے ساتھ ان کے کابینہ کے سبھی وزرا نے بھی صدرجمہوریہ رام ناتھ کواستعفیٰ سونپ دیا ہے۔ صدرجمہوریہ نے اسے قبول کرتے ہوئے سبھی سے نئی حکومت کی تشکیل تک کام کاج سنبھالنے کی گزارش کی ہے، جسے وزیراعظم نے قبول کرلیا ہے۔ اب وہ حلف لینے تک کارگزاروزیراعظم کے طورپرذمہ داریاں سنبھالیں گے۔

نریندرمودی 30 مئی کو مسلسل دوسری باروزیراعظم عہدے کا حلف لیں گے۔ اس سے قبل وہ ماں ہیرا بائی کا آشیرواد لینے گجرات جائیں گے۔ ساتھ ہی اپنے لوک سبھا حلقہ کے رائے دہندگان کا شکریہ ادا کرنے کے لئے وارانسی کا بھی رخ کریں گے۔ بی جے پی کے ایک سینئرلیڈرنے بتایا مغربی بنگال، اوڈیشہ اورتلنگانہ میں پارٹی نے قابل ذکرکامیابی حاصل کی ہے۔ ایسے میں ان ریاستوں سے منتخب ہوئے نئے چہروں کوبھی کابینہ میں شامل کیا جاسکتا ہے۔ پارٹی کی اعلیٰ قیادت کا زوردوسری صف کے لیڈروں کو بڑھاوا دینے پرہے۔ ایسے میں کئی نوجوان چہروں کو کابینہ میں شامل کئے جانے کا امکان ہے۔

Loading...